ہریانہ میں معلق صورت حال، بی جے پی کے جے جے پی کے ساتھ حکومت بنانے کے آثار

ہریانہ میں بی جے پی چالیس سیٹوں کے ساتھ انتخابات میں سب سے بڑی پارٹی رہنے کے باوجود اکثریت کے اعداد و شمار سے اب بھی چھ سیٹ دور ہے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

چنڈی گڑھ: ہریانہ اسمبلی کی 90 سیٹوں کے لئے گزشتہ 21 اکتوبر کو ہوئے انتخابات کی آج ہورہی گنتی کے اب تک کے رجحانوں اور نتائج کے مطابق کسی بھی سیاسی پارٹی کو اکثریت حاصل ہوتی نہیں نظر آرہی ہے اور ریاست میں معلق اسمبلی کی صورت حال صاف دکھائی دے رہی ہے۔

اب تک کے اعلان شدہ 73 انتخابی نتائج میں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جےپی) 31 سیٹیں جیت چکی ہیں اور نو دیگر سیٹوں پر آگے ہے۔ چالیس سیٹوں کے ساتھ انتخابات میں سب سےبڑی پارٹی رہنے کے باوجود وہ اکثریت کے اعدادوشمار سے ابھی بھی چھ سیٹ دور ہے۔ لیکن اس کے جن نائک پارٹی (جے جے پی) کے ساتھ مل کر ریاست میں حکومت بنانے کے آثار نظر آرہے ہیں۔ جے جے پی کو اس انتخابات میں دس سیٹیں ملی ہیں۔

ذرائع کے مطابق بی جے پی کے اعلی قیادت نے جے جےپی لیڈروں کے ساتھ رابطہ قائم کیا ہے۔ جے جے پی ممکنہ طور پر اپنی ورکنگ گروپ کی میٹنگ میں باضابطہ اعلان کرسکتی ہے۔ ویسے بھی جے جے پی کو یہ شبہ بھی ضرورت ہوگا کہ بی جے پی اگر آزاد امیدواروں کے سہارے اگر حکومت بنالیتی ہے تو حکومت میں شامل ہونے کا موقع وہ کھودے گی۔ ایسےمیں وہ ضرور اس بات پر سنجیدگی سے غور کرے گی کہ حکومت میں رہتے ہوئے کافی کچھ کرسکتی ہے اور ویسے بھی اس نوتشکیل پارٹی کے لئے حکومت میں شامل ہونا بڑی بات ہوگی۔

کانگریس نے 25 سیٹیں جیت لی ہیں اور چھ سیٹوں پر آگے ہے۔ کانگریس اس انتخابات میں دوسری بڑی پارٹی بن کر ابھری ہے۔ ہریانہ لوک ہت پارٹی اور انڈین نیشنل لوک دل (آئی این ایل ڈی) کے بالترتیب کانڈا (سرسہ) اور ابھے سنگھ چوٹالہ (اعلان آباد) سے انتخابات جیت چکے ہیں۔

پانچ سیٹوں پر آزاد امیدواروں نے جیت حاصل کی ہے اور دو دیگر پر وہ آگے ہے۔ مجموعی طور پر اس وقت معلق صورت حال نظر آرہی ہے اور حکومت کی تشکیل میں اقتدار کی چابی جے جےپی اور آزاد امیدواروں کے ہاتھوں میں ہے۔
وزیراعلی منوہر لال کھٹر کرنال حلقہ سے 45188 ووٹوں کے فرق سے انتخابات جیت چکے ہیں۔ ان کے کابینی معاون ونل وج بھی امبالہ کینٹ سے 20165 ووٹوں کے فرق سے انتخابات جیت چکے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔