کوئی ہمارے ماں-باپ کا کارٹون بنائے گا تو ہم اسے مار دیں گے: منور رانا

منور رانا نے کہا کہ اگر ہمارے ملک میں کوئی کسی دیوی-دیوتا کا، ماں سیتا کا یا بھگوان رام کا فحش کارٹون بنا دے جسے دیکھ کر بے حیائی ہوتی ہو، آنکھیں بند کرنے کو جی چاہتا ہو تو ہم اسے مار دیں گے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

لکھنؤ: فرانس میں آئے دن شائع ہونے والے توہین آمیز خاکوں کے رد عمل میں پہلے ایک ٹیچر اور اس کے بعد ایک خاتون کا سر قلم کرنے کے واقعہ پر مشہور شاعر منور رانا نے کہا ہے کہ مسلمانوں کو چڑھانے کے لئے اس طرح کی حرکتیں کی جا رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوئی ہمارے ماں-باپ کے فحش کارٹون بنائے گا تو ہم اسے مار دیں گے۔

ایک ٹی وی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے منور رانا نے کہا ’’اگر ابھی کوئی شخص میرے ماں-باپ کا فحش کارٹون بنا دے، تو ہم تو اس کو مار دیں گے۔ اسی طرح اگر کوئی ہمارے ملک ہندوستان میں کوئی کسی دیوی-دیوتا کا، ماں سیتا کا یا بھگوان رام کا فحش کارٹون بنا دے جسے دیکھ کر بے حیائی ہوتی ہو، آنکھیں بند کرنے کو جی چاہتا ہے تو ہم اسے بھی مار دیں گے۔‘‘

انہوں نے مزید کہا، ’’جب ہندوستان میں ہزاروں سال سے غیرت کے نام پر قتل کو جائز مان لیا جاتا ہے اور کوئی سزا نہیں ہوتی تو آپ اسے ناجائز کیسے کہہ سکتے ہیں۔ یا تو اسے بھی آپ لکھ کر دیجیے کہ یہ غلط ہوا ہے، سب پکڑے جائیں گے، یا آپ کہیے کہ جو یہاں ہوا ہے وہی وہاں ہو رہا ہے، پوری دنیا میں یہی ہو رہا ہے۔‘‘

وزیر اعظم کے بیان پر منور رانا نے کہا کہ وزیر اعظم کو دراصل رافیل درکار ہے، اسی وجہ سے وہ ایسا بیان دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فرانس میں جو کچھ بھی ہوا ہے وہ مسلمانون کی دل آزاری کے لئے اور انہیں چڑھانے کے لئے کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کو چڑھانے کے لئے جس نے کارٹون بنایا اسی کو قتل کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ وزیر اعظم مودی نے فرانس میں ہونے والے حملے کو دہشت گردی قرار دے کر اس کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے ٹوئٹ کر کے کہ ’’دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہندوستان ہمیشہ فرانس کے ساتھ کھڑا ہے۔ ہماری تعزیت ان حملوں کے متاثرین کے اہل خانہ اور فرانس کے عوام کے ساتھ ہے۔‘‘

next