بی جے پی سے اگر کوئی دلت بھی انتخابات لڑے تو اسے بھی شکست دیں: بھیم آرمی

چندر شیکھر نے مودی حکومت کی طرف سے دیئے گئے اعلی ذات کو 10 فیصد ریزرویشن کی بھی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دلت سماج اس فیصلے سے کافی دکھی ہے۔

تصویر آس محمد
تصویر آس محمد

آس محمد کیف

سہارنپور: 2019 لوک سبھا انتخابات کی تیاریوں میں ہر پارٹی زور شور سے مشغول ہیں، آج سہارنپور میں دلتوں میں مقبول بھیم آرمی نے الیکشن میں سرگرم ہونے کا اعلان کیا۔ دهرادون مارگ پر واقع روی داس آشرم میں منعقد پروگرام میں بھیم آرمی کے چندر شیکھر آزاد نے یہ اعلان کیا کہ بھیم آرمی اگلے لوک سبھا انتخابات میں بھارتی جنتا پارٹی کو شکست دینے کے لئے کام کرے گی۔ چندر شیکھر نے کہا کہ وہ اتحاد کا خیر مقدم کرتے ہیں ساتھ ہی انہوں نے اعلان کیا کہ اگر ان کا بھائی بھی بی جے پی سے الیکشن لڑنے آ جائے تو آپ لوگ یہ کہہ کر اسے ووٹ نہ دیں کہ آپ بھائی تو ہمارے ہو مگر بی جے پی کو ہم ووٹ نہیں دیں گے۔

تصویر آس محمد
تصویر آس محمد

چندر شیکھر نے اس دوران اتر پردیش کے وزیر یوگی آدتیہ ناتھ کی جم کر تنقید کی انہوں نے کہا کہ وہ کہتے ہیں کہ ان کی حکومت کے دوران کوئی فساد نہیں ہوا جبکہ خود ان کا نام 23 فسادات میں شامل ہےچندر شیکھر نے الیکشن لڑنے کے امکان سے صاف انکار کرتے ہوئے کہا کہ ان کا مقصد صرف بی جے پی کو شکست دینا ہے۔ ، بھيم آرمی نے آج یہاں سال بھر سے گاؤں-گاؤں چلائے جا رہے بھیم اسکولوں کے اساتذہ کا بھی خیر مقدم کیا۔

چندر شیکھر نے مودی حکومت کی طرف سے دیئے گئے اعلی ذات کو 10 فیصد ریزرویشن کی بھی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دلت سماج اس فیصلے سے کافی دکھی ہے، ان کے علاوہ دیگر مقررین نے بھی اعلیٰ ذات کو دیئے گئے ریزرویشن کے لئے مودی حکومت کی تنقید کی ہے۔

حوصلوں سے پُر مقررین نے جوش و خروش سے مرکز مودی حکومت اور اترپردیش کی یوگی حکومت کی جم کر نقطہ چینی کی، روی داس آشرم میں چندر شیکھر آزاد کے جیل سے رہا ہونے کے بعد یہ پہلی عوامی ریلی تھی جس میں ہزاروں کی تعداد میں دلت نوجوانوں نے حصہ لیا۔

ریلی میں شامل ہونے کے لئے مظفرنگر سے سہارنپور پہنچے نوجوان نتن جاٹو نے کہا ‘‘چندر شیکھر بھائی سیاسی طور پر اچھا تجربہ رکھتے ہیں وہ جانتے ہے کہ دلت سماج کا مفاد کدھر ہے! بی جے پی کے آنے سے دلتوں کی زندگی میں مزید مشکلات پیدا ہوجائیں گی وہ اچھی طرح یہ سمجھتے ہیں۔ جیسا کہ دلتوں پر ہو رہے ظلم و ستم کے واقعات بھی یہ ثابت کرتے ہیں۔ فی الحال ہم چندر شیکھربھائی کے ذریعہ شروع مہم ‘بی جے پی ہراؤ’ کے لئے کام کریں گے۔

اس سے پہلے پٹنہ کی ریلی میں چندر شیکھر نے کہا تھا کہ اگر اعلی ذات امیدوار بی ایس پی سے بھی ہو تو اسے شکست دے دینا، آج انہوں نے کہا کہ اگر دلت سماج کا آدمی بی جے پی سے آئے تو اسے بھی ہرا دینا، اس سے کہنا کہ ویسے تو تم ہمارے بھائی ہو مگر بی جے پی کو ہم ووٹ نہیں دیں گے۔ پٹنہ کے بعد چندر شیکھر نے کئی جلسوں میں یہ واضح کیا تھا کہ وہ دلتوں میں قیادت کا سوال نہیں کھڑا کرنا چاہتے بلکہ وہ کاشی رام کے آدرشوں پر چلنا چاہتے ہیں وہ بی ایس پی سربراہ مایاوتی کو ملک کا وزیر اعظم دیکھنے کی خواہش رکھتے ہیں اور ان کو پی ایم بنانے کے لئے ہی وہ کوشش كریں گے، یہی باتیں انہوں نے سہارن پور میں بھی سب دہرائیں۔

سہارنپور میں منعقد بھیم آرمی کی اس ریلی میں شرکت کرنے آئے برہم پال جاٹو (52) نے ہمیں بتایا ’’دلت سماج میں سیاسی قبولیت صرف مایاوتی جی کی ہے، چندر شیکھر نوجوانوں میں مقبولیت رکھتے ہیں اس سے انکار نہیں کیا جا سکتا، اس دلت نوجوانوں میں سیاسی شعور بھی ہے اور وہ اچھی طرح جانتا ہے کہ یہی موقع ہے جب دلت کی بیٹی وزیر اعظم بن سکتی ہے لہذا چندر شیکھر بھی ‘‘بہن جی فار پی ایم’’ مہم کے ساتھ کھڑے ہیں۔

چندر شیکھر کے جیل میں بند ہونے کے دوران ان سے گجرات کے ایم ایل اے جگنیش میوانی نے بھی ملاقات کرنے کی کوشش کی تھی، تب جگنیش میوانی بھیم آرمی کے تمام ارکان سے چپکے چپکے مل کر نبض ٹٹول رہے تھے، اس وقت انہوں نے چندر شیکھر کو سہارنپور سے الیکشن لڑانے کی بات بھی کہی تھی۔ اس وقت نوجوانوں کا یہ ممکنہ اتحاد نہیں ہو پایا تھا۔

سہارنپور میں منعقد اس ریلی میں گزشتہ سال دلت-ٹھاکر لڑائی میں متعدد متاثر دلت شامل ہوئے ان لوگوں نے اپنے درد و غم کا اظہار کیا، ریلی میں شریک شبيرپور کے راجو جاٹو نے کہا کہ انہیں اب رات میں نیند نہیں آتی ہے، اب وہ ووٹ کی طاقت استعمال کر کے اپنے ساتھ ہوئے ظلم و ستم کا ان لوگوں سے بدلہ لینا دینا چاہتے ہیں، جنہوں نے ان کے ساتھ زیادتی کی ہے۔