مجھے ایک بار پھر گھر سے باہر جانے کی اجازت نہیں دی گئی: محبوبہ مفتی

محبوبہ مفتی نے اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر ایک تصویر بھی اپ لوڈ کی ہے جس میں سیکورٹی فورسز کی ایک گاڑی کو ان کے دروازے کے باہر کھڑے دیکھا جاسکتا ہے۔

محبوبہ مفتی، تصویر آئی اے این ایس
محبوبہ مفتی، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

سری نگر: پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کا دعویٰ ہے کہ انہیں بدھ کے روز ایک بار پھر خانہ نظر بند رکھا گیا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے آج ترال جانے کا پروگرام بنایا تھا جہاں گزشتہ روز فوج نے مبینہ طور پر ایک گاؤں میں توڑ پھوڑ کی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ کشمیر کی اصلی تصویر ہے جو یہاں آنے والے معززین کو دکھائی جانی چاہئے۔

موصوف صدر نے یہ باتیں بدھ کے روز اپنے ایک ٹوئٹ میں کہیں۔ انہوں نے اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر ایک تصویر بھی اپ لوڈ کی ہے جس میں سیکورٹی فورسز کی ایک گاڑی کو ان کے دروازے کے باہر کھڑے دیکھا جاسکتا ہے۔ ان کا اپنے ٹوئٹ میں کہنا تھا کہ ’ترال، جہاں ایک گاؤں میں فوج نے مبینہ طور پر توڑ پھوڑ کی ہے، جانے سے روکنے کے لئے مجھے ایک بار پھر گھر میں بند کر دیا گیا۔ یہ کشمیر کی اصل تصویر ہے جو حکومت ہند کی ہدایات پر ہونے والے پکنک دوروں کی بجائے یہاں آنے والے معززین کو دکھائی جانی چاہئے‘۔


محبوبہ مفتی نے گزشتہ روز اپنے ایک ٹوئٹ میں الزام لگایا تھا کہ ترال میں یگونی کیمپ کے فوجی اہلکاروں نے گھروں کی توڑ پھوڑ کی اور ایک کنبے کے افراد کی بے رحمی سے پٹائی کی۔ ان کا ٹوئٹ میں مزید کہنا تھا کہ اس کنبے کی ایک لڑکی کو شدید زخمی ہونے کے سبب اسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔ بتادیں کہ ترال کے سیر جاگیر علاقے کے ایک کنبے نے فوج پر ان کی بیٹی کو زد کوب کرنے کا الزام لگایا تھا۔ تاہم فوج نے کنبے کی طرف سے لگائے گئے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔