ہرین پانڈیا قتل معاملہ: نظرثانی کی عرضی خارج، 10 مجرموں کی سزائیں برقرار

جسٹس ارون مشرا اور جسٹس ونیت سرن کی بنچ نے پانچ جولائی کے اپنے فیصلے کے خلاف 12 میں سے 10 قصورواروں کی نظر ثانی کی عرضیاں مسترد کر دیں

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

یو این آئی

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے گجرات کے سابق وزیر داخلہ ہرین پانڈیا قتل کے قصورواروں کی نظر ثانی کی عرضیوں کو جمعرات کو خارج کر دیا۔ جسٹس ارون مشرا اور جسٹس ونیت سرن کی بنچ نے پانچ جولائی کے اپنے فیصلے کے خلاف 12 میں سے 10 قصورواروں کی نظر ثانی کی عرضیاں مسترد کر دیں۔

سپریم کورٹ نے 12 میں سے 10 قصورواروں کی جانب سے دائر نظرثانی کی عرضیاں خارج کر دیں۔ عدالت نے کہا کہ فیصلے پر دوبارہ سے غور کرنے کے مطالبے میں کوئی جان نہیں ہے، اس فیصلے میں کوئی کمی یا خامی نہیں ہے۔ گجرات ہائی کورٹ نے سال 2003 کے ہرین پانڈیا قتل معاملے کے سبھی 12ملزمین کو قتل کے الزام سے بری کر دیا تھا۔ لیکن سپریم کورٹ نے فیصلے کو پلٹتے ہوئے ملزمین کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

گجرات میں نریندرمودی حکومت کے وقت اس وقت کے وزیر داخلہ ہرین پانڈیا کو 26 مارچ 2003 کو احمدآباد کے لا گارڈن علاقے میں اس وقت گولی مار کر قتل کر دیا گیا تھا جب وہ صبح کی سیر کرنے نکلے تھے۔ اس قتل کا الزام 12 افراد پر تھا۔

سپریم کورٹ نے اس معاملے کی سماعت میں کہا تھا کہ سی بی آئی کی جانچ کا رخ واضح نہیں ہے۔ عدالت نے یہ بھی کہا تھا کہ تفتیش کے دوران کچھ حقائق کی اندیکھی کی گئی اور بہت کچھ چھوٹ گیا۔ ہائی کورٹ میں معاملہ جانے سے پہلے سیشن کورٹ نے ملزمین کو قتل کرنے اور مجرمانہ سازش کرنے کا قصوروار مانا تھا۔

واضح رہے کہ ہرین پانڈیا کا قتل اس وقت ہوا تھا جب گجرات میں نریندرمودی حکومت تھی۔ اس وقت انسداد دہشت گردی قانون کے تحت خصوصی پوٹا کورٹ نے سبھی ملزمین کو قصوروار ٹھہراتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی تھی۔ ملزمین نے اس فیصلے کو ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ سال 2011 میں 29 اگست کو گجرات ہائی کورٹ نے سیشن کورٹ کے فیصلے کو پلٹ دیا اور سبھی ملزمین کو بری کر دیا تھا۔ ہائی کورٹ کے اس فیصلے کے خلاف سی بی آئی نے 2012 میں سپریم کورٹ کا رخ کیا تھا۔

سی بی آئی کے مطابق پانڈیا کو 2002 کے گجرات فسادات کا انتقام لینے کے لئے قتل کیا گیا تھا۔ بعد ازاں، رواں سال جولائی میں ذیلی عدالت کے فیصلے کو بحال کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے 12 افراد کو مجرم قرار دیا۔ مقدمہ میں اصغر علی، محمد رؤف، محمد پرویز عبدالقیوم شیخ، پرویز خان پٹھان عرف اطہر پرویز، محمد فاروق عرف حاجی فاروق، شاہنواز گاندھی، کلیم احمد عرف کلیم اللہ، ریحان پتھوالا، محمد ریاض سریشوالا، انیس ماچس والا، محمد یونس سریشوالا اور محمد سیف الدین کو مجرم قرار دیا گیا تھا۔