گیان واپی-شرنگار گوری کیس: 8 ہفتہ بعد سماعت والی عرضی خارج، ’کاربن ڈیٹنگ‘ معاملے پر مسلم فریق کو نوٹس جاری

گیان واپی مسجد اور شرنگار گوری معاملے میں ہندو فریق کے وکیل وشنو شنکر جین کا کہنا ہے کہ ’’ہم کاربن ڈیٹنگ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ مسلم فریق کا کہنا ہے کہ یہ ایک فوارہ ہے۔‘‘

وارانسی کی گیان واپی مسجد، تصویر آئی اے این ایس
وارانسی کی گیان واپی مسجد، تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

گیان واپی مسجد اور شرنگار گوری کیس میں آج شروع ہوئی سماعت کے دوران سب سے پہلے وارانسی کورٹ نے مسلم فریق کی اس عرضی کو خارج کر دیا، جس میں 8 ہفتہ بعد سماعت کی گزارش کی گئی تھی۔ بعد ازاں مبینہ ’شیولنگ‘ کی کاربن ڈیٹنگ کے لیے ہندو فریق کی عرضی پر وارانسی کورٹ نے مسلم فریق کو نوٹس جاری کر ان کا رد عمل مانگا، اور پھر آئندہ سماعت کے لیے 29 ستمبر کی تاریخ مقرر کی۔

گیان واپی مسجد اور شرنگار گوری معاملے میں ہندو فریق کے وکیل وشنو شنکر جین کا کہنا ہے کہ ’’ہم کاربن ڈیٹنگ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ مسلم فریق کا کہنا ہے کہ یہ ایک فوارہ ہے۔ ایک خود مختار باڈی کو اس کی جانچ کر کے حقیقت سے پردہ اٹھانا چاہیے۔ عدالت نے کاربن ڈیٹنگ کے لیے ہماری درخواست پر نوٹس جاری کیا ہے اور مسلم فریق سے اپنی بات رکھنے کے لیے کہا ہے۔‘‘ وہ مزید کہتے ہیں کہ ’’29 ستمبر کو نمٹارا ہوگا۔ کورٹ نے 8 ہفتہ بعد سماعت والی عرضی (انجمن انتظامیہ مساجد کمیٹی نے تیاری کے لیے وقت مانگا تھا) کو خارج کر دیا ہے۔‘‘


دراصل وارانسی کے ضلع جج اجئے کرشن وشویش نے گزشتہ 12 ستمبر کو معاملہ قابل سماعت قرار دینے کے ساتھ ہی 22 ستمبر کو اس کے لیے تاریخ مقرر کر دی تھی۔ لیکن گزشتہ دنوں ضلع جج کی عدالت میں مساجد کمیٹی کے وکلاء نے درخواست دے کر کہا تھا کہ ’’22 ستمبر کی تاریخ ملتوی کر کے کم از کم 8 ہفتے بعد کی تاریخ دی جائے۔‘‘ مساجد کمیٹی نے اس تعلق سے سپریم کورٹ کے اس حکم کا حوالہ دیا جس میں عدالت نے معاملہ ضلع جج کے یہاں چلانے کا حکم دیا تھا۔ ساتھ ہی حکم آنے پر آئندہ سماعت کا وقت کم از کم 8 ہفتے کے بعد کا طے کیا تھا تاکہ جس کسی کو بھی اعتراض ہو تو اسے مناسب وقت مل جائے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔