راج بھون کو سیاسی سازش کا مرکز نہیں ہونا چاہئے: راوت

شیو سینا کے سنجے راوت نے ٹویٹ کیا کہ ’’تاریخ ان لوگوں کو نہیں چھوڑتی جو غیر آئینی برتاؤ کرتے ہیں۔ سمجھنے والوں کو اشارا کافی ہے‘‘۔

سوشل میڈیا
سوشل میڈیا
user

یو این آئی

شیوسینا کے رکن پارلیمنٹ سنجے راوت نے اتوار کے روز مہاراشٹر کے گورنر بھگت سنگھ کوشیاری کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ راج بھون کو ’’سیاسی سازش کا مرکز نہیں بننا چاہئے‘‘۔

مسٹر راوت نے مسٹر كوشیاری کا نام لئے بغیر کہا کہ انہیں آنجہانی ٹھاکر رام لال کی یاد آتی ہے جنہوں نے 1980 کی دہائی کے آغاز میں آندھرا پردیش کے راج بھون میں خدمت کی تھی۔ انہوں نے ٹویٹ کرکے کہا’’تاریخ ان لوگوں کو نہیں چھوڑتی جو غیر آئینی برتاؤ کرتے ہیں۔ سمجھنے والوں کو اشارا کافی ہے‘‘۔

انہوں نے گورنر کے خلاف ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مہاراشٹر کابینہ نے وزیر اعلی ادھو ٹھاکرے کو گورنر کے کوٹے کی دو خالی نشستوں میں سے اسمبلی یا قانون ساز کونسل کے رکن کے طور پر نامزد کرنے کی درخواست کی تھی۔

واضح رہے کہ مسٹر ٹھاکرے کو 28 مئی تک اسمبلی یا قانون ساز کونسل کا رکن بننا ضروری ہے۔ نہیں تو انہیں اپنے عہدے سے ہٹنا پڑے گا۔ کورونا وائرس ’كووڈ -19‘ وبا کو دیکھتے ہوئے مرکزی حکومت نے تمام انتخابات ملتوی کر دیئے ہیں لیکن تین مئی کے بعد تصویر واضح ہو سکتی ہے۔

مسٹر ٹھاکرے موجودہ وقت میں ریاست کی مقننہ کے کسی بھی ایوان کے رکن نہیں ہیں۔ مسٹر ٹھاکرے کو شیوسینا، نیشنلسٹ کانگریس پارٹی اور کانگریس نے اتفاق رائے سے مہاوكاس اگھاڑی اتحاد کے رہنما کے طور پر منتخب کیا تھا اور 28 نومبر، 2019 کو انہوں نے وزیر اعلی کے عہدے کا حلف لیا تھا۔ مسٹر ادھو آنجہانی مسٹر بال ٹھاکرے خاندان کی جانب سے سیاسی دفتر سنبھالنے والے پہلے رکن ہیں۔

مسٹر راوت نے کہا کہ مسٹر کوشیاری نے اس کے قبل مسٹر دیویندر فرنویس کو وزیر اعلی اور اجیت پوار کو نائب وزیر اعلی کے عہدے کا حلف دلا کر دو رکنی حکومت بنوائی تھی جو مشکل سے 80 گھنٹوں میں گرگئی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next