جموں و کشمیر کی شناخت ختم کر دی، اس کو ایک ضلع جیسا درجہ دے دیا: غلام نبی آزاد

کسی لیڈر میں جرات ہے تو وہ کل بیان جاری کرے کہ اسے ریاستی درجہ نہیں چاہیے۔ ایسا کوئی لیڈر نہیں ہے۔ سب جماعتیں ریاستی درجے کی واپسی چاہتی ہیں۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کانگریس کے سینئر رہنما و سابق وزیر اعلیٰ غلام نبی آزاد نے کہا ہے کہ ریاستی درجہ چھین کر صدیوں پرانی ریاست جموں و کشمیر کی شناخت ختم کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کی تمام سیاسی جماعتیں ریاستی درجے کی واپسی کا مطالبہ کر رہی ہیں اور اس کے لئے پارلیمنٹ کے اندر اور پارلیمنٹ کے باہر لڑائی کی ضرورت ہے۔

پارلیمان کے ایوان بالا یا راجیہ سبھا سے حال ہی میں سبکدوش ہونے والے آزاد نے یہ باتیں ہفتے کو گاندھی گلوبل فیملی کی جانب سے منعقدہ ایک پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔


انہوں نے کہا: 'کئی برسوں کے بعد اب جموں و کشمیر ایک ریاست بھی نہیں رہی ہے۔ ہماری پہچان ختم ہو چکی ہے۔ ایسا کوئی نہیں تھا جو جموں و کشمیر کو نہیں جانتا تھا لیکن آج ہمارے پاس وہ شناخت نہیں ہے۔ ہمیں ایک ضلع جیسا درجہ دیا گیا ہے'۔

ان کا مزید کہنا تھا: 'پارلیمنٹ اور پارلیمنٹ کے باہر ہماری یہ لڑائی جاری رہے گی کہ ہمیں ہمارا ریاستی درجہ واپس دے دیا جائے۔ جموں و کشمیر کا ہر ایک لیڈر چاہے وہ کانگریس، نیشنل کانفرنس، پی ڈی پی، بی جے پی یا آر ایس ایس کا ہی کیوں نہ ہو، وہ ریاستی درجے کی واپسی چاہتا ہے۔ اگر کسی لیڈر میں جرات ہے تو وہ کل بیان جاری کرے کہ ہمیں ریاستی درجہ نہیں چاہیے۔ ایسا کوئی لیڈر نہیں ہے۔ سب جماعتیں ریاستی درجے کی واپسی چاہتی ہیں'۔


آزاد نے کہا کہ ریاستی درجے کی واپسی کے لئے ایک لڑائی لڑنے کی ضرورت ہے اور ایک اور لڑائی کانگریس کو مضبوط بنانے کے لئے لڑنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا: 'یہ لڑائی ہم نے لڑنی ہے۔ جموں و کشمیر میں ہمارے ساتھی پارلیمنٹ میں لڑیں گے۔۔ غلام نبی آزاد نے پانچ اگست 2019 کے اقدامات پر کہا: 'ہم سب کو بکھیر دیا گیا ہے۔ ریاست کے حصے کئے گئے ہیں۔ کوئی ٹکڑا ادھر گرا تو کوئی اُدھر گرا۔ میں آج صبح اپنے ساتھیوں کو بتا رہا تھا کہ یہاں ہریانہ، پنجاب یا اترپردیش، آندھرا پردیش اور مہاراشٹر کی طرح زمین نہیں ہے۔ ہماری ریاست صرف پہاڑوں اور جنگلوں سے بنی ہوئی ہے۔ اب جو 15 سے 20 فیصد زمین بچی ہے اس میں ہمارے شہر اور دیہات آباد ہیں'۔


ان کا مزید کہنا تھا: 'جموں میں آر ایس پورہ میں کھیتی ہوتی ہے جموں میں اور کہیں کھیتی نہیں ہوتی ہے۔ ہمارے پاس کارخانے نہیں ہیں۔ جو کارخانے جموں، کٹھوعہ اور سانبہ میں تھے، جن کی وجہ سے ہمارے نوجوان اپنی روزی روٹی کماتے تھے، وہ بند ہو چکے ہیں'۔

آزاد نے جموں و کشمیر میں ٹول پلازوں کی مبینہ بڑھتی تعداد پر کہا: 'تیس سال سے دو وقت کی روٹی کے لئے پیسے نہیں ہیں۔ ہمارے پاس ایک ٹول پلازہ تھا لیکن آج پٹھانکوٹ سے لے کر کشمیر تک پانچ ٹول پلازے ہیں۔ کہاں سے لائیں گے وہ ٹول ٹیکس؟'


انہوں نے کہا: 'ہمارے ہاں ہاؤس ٹیکس نہیں تھا لیکن وہ ٹیکس بھی لگا دیا گیا۔ اب لوگوں کے پاس صرف کپڑے بچے ہیں لیکن ان کے شاید خریدار نہیں ملیں گے کیونکہ ہم الگ طرح کے کپڑے پہنتے ہیں'۔ بتادیں کہ سینیئر کانگریس لیڈر غلام نبی آزاد ایک روز قبل یعنی جمعہ کو جموں پہنچے جہاں ان کا شاندار استقبال کیا گیا۔

غلام نبی آزاد ایوان بالا میں حزب اختلاف کے رہنما تھے۔اڑتالیس برسوں سے کانگریس سے جڑے غلام نبی آزاد کم از کم چار دہائیوں تک گاندھی خاندان کے بہت قریب رہے۔ وہ پارٹی کا ایک ایسا 'مسلمان' چہرہ تھا جس کو وہ ہندو اکثریتی علاقوں میں بھی انتخابی مہم کے لیے استعمال کرتی تھی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔