غازی آباد میں سنسنی خیز واردات، بیوی-بچوں کے قتل کے بعد نوجوان کی خودکشی، منہ پر ٹیپ چپکی ملی

قومی دارالحکومت علاقہ میں ضلع غازی آباد کے مسوری علاقے میں ایک شخص نے اہلیہ اور 3 بچوں کا بے رحمی سے قتل کرنے کے بعد خود بھی پھانسی لگا کر خود کشی کر لی۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

غازی آباد: این سی آر میں واقع ہریانہ کے گڑگاؤں میں ایک انجینئر کے اپنے بیوی-بچوں کو قتل کرنے کے بعد خود بھی خود کشی کرنے کا معاملہ ابھی ٹھنڈا بھی نہیں ہوا کہ اب غازی آباد میں بھی ویسا ہی واقعہ رونما ہو گیا ہے۔ این سی آر میں ضلع غازی آباد کے مسوری علاقے میں ایک شخص نے اہلیہ اور 3 بچوں کا بے رحمی سے قتل کرنے کے بعد خود بھی پھانسی لگا کر خود کشی کر لی۔

موصول اطلاع کے مطابق یہ واقعہ گزشتہ رات کا ہے ۔ پہلے شوہر نے تینوں بچوں کو زہر دے دیا اور بعد میں اہلیہ کے سر پر ہتھوڑےسے حملہ کیا ۔ سینئر پولس سپرنٹنڈنٹ سدھیر کمار نے بتایا کہ بچوں کو زہر اور اہلیہ کے سر پر حملہ کرنے کے بعد اس نے بھی پھانسی لگا کر خود کشی کر لی۔ اہلیہ کو نازک حالت میں علاج کیلئے نزدیکی اسپتال پہنچایا گیا جہاں اس کی بھی موت ہو گئی۔

واقعہ کے متعلق اہل خانہ کو صبح پتہ چلا اور بعد میں پولس کو اس کی اطلاع دی گئی ۔ شخص کا نام پردیپ بتایا گیا ہے ۔ اس سے ایک سوسائڈ نوٹ بھی ملا ہے جس میں اس نے لکھا ہے کہ اس کی اہلیہ اس پر شک کرتی تھی ۔ اس وجہ سے اس نے سب کا قتل کرکے ان کے منہ میں ٹیپ لگا دی ۔

ایس ایس پی سدھیر کمار نے بتایا کہ پولس کو صبح پانچ بجکر 40 منٹ پر واقعہ کی اطلاع ملی تھی ۔ انہوں نے واقعہ کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ اس معاملے میں ایف آئی آر درکرکے تحقیقات شروع کر دی گئی ہے ۔ سینئر پولس سپرنٹنڈنٹ نے اہلیہ ، تینوں بچوں اور شوہر کی موت کی تصدیق کی ہے ۔

واضح رہے کہ حال ہی میں گڑگاؤں میں بھی ایک انجینئر نے اسی طرح اپنے خاندان کو قتل کرنے کے بعد خود کشی کر لی تھی۔ انجینئر کا نام پرکاش سنگھ تھا۔ پرکاش نے بیوی اور دو بچوں کا پہلے دھار دار ہتھیار سے پہلے قتل کیا اور پھر خود بھی پھانسی لگا کر جان دے دی۔ انجینئر کی بیوی ایک نجی اسکول کی منیجر تھی جبکہ بی ٹی کی عمر 18 سال اور بیٹے کی عمر 15 سال تھی۔

(یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

Published: 5 Jul 2019, 1:10 PM