کسانوں کا ہندوستان بند جاری، شام 4 بجے تک چلے گا، کئی سرحدیں بند

زرعی قوانین کے خلاف دس ماہ سے کسانوں کا مظاہرہ جاری ہے اور آج کسانوں نے ہندوستان بند رکھنے کی اپیل کی ہے ۔ بند صبح 6 بجے سے جاری ہے اور شام 4 بجے تک رہےگا۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

گزشتہ دس مہینوں سے کسان دہلی میں آنے والی کئی سرحدوں پر نئے زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں ۔ اس دوران کسان رہنماؤں کی مرکز سے کئی مرتبہ بات بھی ہوئی لیکن دونوں فریق اپنےموقف پر اڑے ہوئے ہیں۔ کسانوں کا مطالبہ ہے کہ تینوں قوانین کو مرکز واپس لے جبکہ مرکز کسی بھی قانون کووپس لینے کے لئے تیار نہیں ہے۔ اسی کے پیش نظر کسانوں نے اپنی طاقت کے مظاہرےکے لئے آج ہندوستان بند رکھا ہوا ہےجو صبح 6 بجے سے جاری ہے اور شام 4 بجے تک چلے گا۔

واضح رہے کانگریس سمیت کئی سیاسی پارٹیوں نے کسانوں کی حمایت کا اعلان کیا ہے ۔ کسانوں کے بند کے پیش نظر دہلی میں حفاظتی انتظامات سخت کئے ہوئے ہیں اور دہلی پولیس نے واضح کر دیا ہے کہ مظاہرین کو دہلی میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔


مرکزی وزیر برائے زرعات نریندر سنگھ تومر نے کسانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ مظارہ کا راستہ چھوڑ کر بات چیت کا راستہ اپنائیں اور حکومت ان کے مطالبات پر غور کرنے کے لئے تیار ہے۔واضح رہے کسان اور حکومت کے مابین پہلے بھی کئی دور کی بات چیت ہو چکی ہے لیکن اس کا کوئی نتیجہ نہیں نکلا ہے۔

واضح رہے آج کے بند کے دوران ہسپتال، میڈیکل اسٹور، طبی خدمات، راحت اور بچاؤ کے کاموں کے لئے تما م ضروری خدمات اور طلباء کو ہر طرح کی چھوٹ حاصل رہے گی ۔ واضح رہے بینک یونین بھی اس بند کا ساتھ دے رہی ہیں۔


کسانوں کے اس بند کا کئی سیاسی پارٹیاں حمایت کر رہی ہیں ۔ جن سیاسی پارٹیوں نے اس بند کا ساتھ دینے کا اعلان کیا ہے ان میں کانگریس، بی ایس پی، ایس پی، عآپ،ڈی ایم کے ، آر جے ڈی، آر ایل ڈی اور بائیں محاذ کی پارٹیاں شامل ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


Published: 27 Sep 2021, 8:11 AM