فرید آباد میں شروع ہوگی ہریانہ کی پہلی ورچوئل عدالت

پنجاب- ہریانہ ہائی کورٹ 17 اگست کو ویڈیو کانفرنس کے ذریعے عدالت میں معاملے میں پیشی کو ختم کرنے اور اسے آن لائن نمٹانے کے لئے فرید آباد میں پہلی ورچوئل عدالت شروع کرے گا۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

یو این آئی

چندی گڑھ: پنجاب- ہریانہ ہائی کورٹ 17 اگست کو ویڈیو کانفرنس کے ذریعے عدالت میں معاملے میں پیشی کو ختم کرنے اور اسے آن لائن نمٹانے کے لئے فرید آباد میں پہلی ورچوئل عدالت شروع کرے گا۔

عدالت کے ایک ترجمان نے آج یہاں بتایا کہ یہ ورچوئل عدالت پورے ہریانہ کے ٹریفک چلان کے معاملات کا نمٹارہ کرے گی ۔ یہ منصوبہ سپریم کورٹ کی ای -کمیٹی کی رہنمائی میں شروع کیا جائے گا۔ منصوبے کے تحت ورچوئل عدالت کے ماتحت معاملات کو سکرین پر جرمانہ کا آٹومیٹک کلکولیشن جج کی جانب سے دیکھا جا سکتا ہے۔

ایک مرتبہ سمن نکلنے اور ملزم کو ای میل یا ایس ایم ایس کے بارے میں معلومات حاصل ہوجانے بعد ملزم ورچوئل کورٹ کی ویب سائٹ پر جا سکتے ہیں اور متعلق کیس کا سی این آر نمبر یا ملزم کا نام یا یہاں تک کہ ڈرائیونگ لائسنس نمبر وغیرہ دے کر معاملے کو سرچ کر سکتے ہیں۔

اگر ملزم آن لائن قصوروار ہے تو جرمانہ کی رقم ظاہر ہوگی اور ملزم جرمانہ ادا کرنے کے لئے آگے بڑھ سکتے ہے ۔ کامیاب ادائیگی اور جرمانہ رقم کی وصولی پر معاملہ خود بخود نمٹ جائے گا ۔ ورچوئل عدالت باقاعدہ عدالتوں پر بوجھ کم کرے گی ۔ نمٹارہ کرنے کا پورا عمل گھنٹوں میں آن لائن ہو گا ۔ عدالتوں میں لوگوں کا آنا بہت کم ہو جائے گا کیونکہ ملزمان کو قصور وار ٹھہرانے کے لئے عدالت میں جانے کی ضرورت نہیں ہوگی ۔