صدارتی انتخاب: دروپدی مرمو کو 1969 کے بعد سب سے کم ووٹ حاصل! لیکن ’اقتدار حامی میڈیا کا راگ الگ ہے‘

دروپدی مرمو نے انتخابات میں کامیابی حاصل کی ہے لیکن مرکز اور کئی ریاستوں میں بی جے پی کے پاس اکثریت ہونے کے باوجود صدارتی انتخابات میں انہیں جتنے ووٹ ملے ہیں وہ اب تک کی سب سے کم اکثریت ہے

نو منتخب صدر دروپدی مرمو / Getty Images
نو منتخب صدر دروپدی مرمو / Getty Images
user

قومی آوازبیورو

جب سے دروپدی مرمو ملک کی 15ویں صدر منتخب ہوئی ہیں، دائیں بازو کے نظریات رکھنے والے یہ ظاہر کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ اس انتخاب میں زبردست کراس ووٹنگ ہوئی ہے اور حزب اختلاف کا اتحاد ایک طرح سے درہم برہم ہو گیا!

لیکن کیا یہ سچ ہے؟

الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار پر گہری نظر ڈالی جائے تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ اصل میں کہانی کچھ اور ہے۔ دروپدی مرمو نے انتخابات میں کامیابی حاصل کی ہے لیکن مرکز اور کئی ریاستوں میں بی جے پی کے پاس اکثریت ہونے کے باوجود صدارتی انتخابات میں انہیں جتنے ووٹ ملے ہیں وہ اب تک کی سب سے کم اکثریت ہے۔

اس الیکشن میں دروپدی مرمو کو کل 10,56,980 ووٹوں میں سے 6,76,803 ووٹ ملے اور ان کی جیت کا فرق 2,96,626 رہا۔ یعنی انہیں اپوزیشن امیدوار یشونت سنہا کے مقابلے میں 28.06 فیصد زیادہ ووٹ حاصل ہوئے اور وہ کل ووٹوں کا 64.03 فیصد حاصل کرنے میں کامیاب رہیں۔

گزشتہ چند صدارتی انتخابات کے اعداد و شمار سے معلوم چلتا ہے کہ کے آر نارائنن ایسے صدر تھے جنہوں نے 1997 کے انتخابات میں کل ووٹوں میں سے 95.6 لاکھ ووٹوں کے ساتھ 97 فیصد ووٹ حاصل کیے تھے۔ اسی طرح 2002 میں ہونے والے انتخابات میں اے پی جے عبدالکلام نے بھی 89 فیصد ووٹ حاصل کیے جن کی کل تعداد 9,22,884 تھی۔ ان کی حریف بائیں بازو کی پارٹیوں کی امیدوار لکشمی سہگل کو 1,07,366 ووٹ حاصل ہوئے تھے۔


دروپدی مرمو کی جیت کے ساتھ ہی کئی خبر رساں اداروں نے اعداد و شمار اور حقائق کو جانچے بغیر یہ کہنا شروع کر دیا کہ مخالف کیمپ میں دھڑے بندی اور پھوٹ کی وجہ سے زبردست کراس ووٹنگ ہوئی ہے۔ حد تو یہ ہے کہ ان خبر رساں اداروں نے تو یہاں تک کہہ دیا ہے کہ دروپدی مرمو کو کیرالہ سے بھی ایک ووٹ حاصل ہوا ہے، جبکہ یہ رکن اتر پردیش سے ہیں اور الیکشن کے دوران علاج کے لیے کیرالہ گئے ہوئے تھے، اسی لیے انہوں نے وہیں ووٹ ڈالا۔

کچھ صحافیوں نے تو جھوٹے پروپیگنڈے کو ہوا دیتے ہوئے ایسے ارکان اسمبلی کی مبینہ فہرست بھی سوشل میڈیا پر شیئر کر دی ہے جنہوں نے کراس ووٹنگ کی ہے!

لیکن حقیقی اعداد و شمار اور اعداد و شمار نے ان تمام دعوؤں کی ہوا نکال دی ہے۔ اگر ہم اعداد و شمار پر گہرائی سے نظر ڈالیں تو یہ واضح ہے کہ موجودہ صدر رام ناتھ کووند کو بھی 2017 کے انتخابات میں دروپدی مرمو سے زیادہ یعنی 65.7 فیصد ووٹ حاصل ہوئے تھے۔ ان سے پہلے پرنب مکھرجی کو رام ناتھ کووند سے زیادہ 69.3 فیصد ووٹ حاصل ہوئے تھے۔


اگر صدارتی انتخابات کی تاریخ پر نظر ڈالیں تو واضح ہوتا ہے کہ ڈاکٹر راجندر پرساد نے 1957 میں اس وقت اب تک کے کسی بھی الیکشن میں سب سے زیادہ ووٹ حاصل کیے تھے، جب انہوں نے دوسری بار صدارتی انتخاب لڑا تھا۔ انہوں نے 99 فیصد ووٹ حاصل کیے، جبکہ 1952 میں پہلی بار صدر بننے کے وقت انہوں نے 84 فیصد سے زیادہ ووٹ حاصل ہوئے تھے۔ ڈاکٹر راجندر پرساد کے بعد دوسرے سب سے زیادہ ووٹ صدر سرو پلی رادھا کرشنن نے حاصل کئے تھے، انہیں 1962 کے انتخابات میں 98 فیصد ووٹ حاصل ہوئے تھے۔

دائیں بازو اور اقتدار پرست میڈیا کے اس بیانیے کو اپوزیشن لیڈروں بالخصوص کانگریس نے حقائق کی بنیاد پر بے نقاب کیا ہے۔ کانگریس کے سوشل میڈیا اور ڈیجیٹل پلیٹ فارم کی چیئرپرسن سپریا شرینیت نے ٹوئٹر پر اعداد و شمار کے ساتھ لکھا۔

’’مودی جی کی انتھک جدوجہد کے باوجود (حکومت گرانے تک)، مسز دروپدی مرمو نے 1969 کے بعد کسی بھی صدر کے مقابلے میں سب سے کم ووٹ فیصد (64 فیصد) حاصل کیا۔ شری یشونت سنہا جی نے 53 سالوں میں کسی بھی اپوزیشن امیدوار کے مقابلے میں سب سے زیادہ ووٹ حاصل کیے، میڈیا کا راگ الگ ہے۔‘‘

اقتدارا حامی میڈیا نے انتخابی نتائج کے اعلان کے بعد ہی مہم شروع کر دی تھی کہ صدارتی انتخاب میں اپوزیشن کے اتحاد کی پول کھل گئی ہے اور پورا کنبہ بکھر گیا ہے۔ اس کے لیے وہ کراس ووٹنگ کے اعداد و شمار پیش کر رہے تھے لیکن ان کے پاس اس بات کا کوئی جواب نہیں تھا کہ اس سب کے بعد صدارتی انتخابات میں دروپدی مرمو کو سب سے کم ووٹ کیوں حاصل ہوئے؟

وہ صرف طاقت اور دائیں بازو کے نظریے کی لہروں پر سوار ہو کر ایک خاص ایجنڈے کو ہوا دینے میں مصروف رہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔