سرکاری اسپتالوں میں کینسر اور شوگر کی مہنگی دوائیوں کی فراہمی بند ہونے پر ڈاکٹروں کی تنظیمیں ناراض

حکومت کا دعویٰ ہے کہ مریضوں کو اس کی بجائے سستی ادویات دی جائیں گی، جس کی تاثیر یکساں ہے۔ لیکن ڈاکٹروں کا ایک بڑا حصہ حکومت کی اس تھیوری کو ماننے کو تیار نہیں۔

علامتی فائل تصویر، سوشل میڈیا
علامتی فائل تصویر، سوشل میڈیا
user

یو این آئی

کولکاتا: مغربی بنگال کے سرکاری اسپتالوں میں کینسر اور شوگر کے مرض کی مہنگی دوائیوں کی سپلائی روکے جانے پر ڈاکٹروں نے سخت تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے مریضوں کے علاج کرنے میں مشکلات پیش آئیں گی۔ اسپتال کے ذرائع کے مطابق کینسر اور ذیابیطس جیسی مہلک بیماریوں کی مہنگی ادویات کوسرکاری اسپتالوں میں فراہمی روک دی گئی ہے۔ ریاستی حکومت نسبتاً سستی ادویات فراہم کرے گی۔ اس فیصلے کے اعلان پر ڈاکٹروں کی کئی تنظیموں نے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ ان کا سوال ہے کہ کیا حکومت کے لیے دوائیوں کی قیمت زیادہ اہم ہے یا پھر انسانی صحت اہم ہے۔ ترنمول کانگریس کے ممبر پارلیمنٹ شوسانتو سین نے کہا ہے کہ یہ فیصلہ فضول خرچی کے پیش نظر کیا گیا ہے۔

ریاستی محکمہ صحت کے ایک حالیہ بیان میں کہا گیا ہے کہ کینسر کی دوائیں سسپلٹین، ایٹوپوسائیڈ، سائکلو فاسفمائیڈ، اینوکساپرین، ہائیڈروکسیوریا اور سرکاری اسپتالوں میں مفت دوائیاں دستیاب نہیں ہوں گی۔ ذیابیطس کی دوائیں دستیاب نہیں ہیں۔ جس کی وجہ سے مریضوں کو پریشانی کا سامنا ہے۔ خاص طور پر مالی طور پر پسماندہ مریضوں کے لیے یہ دوا خریدنا تقریباً ناممکن ہے۔


حکومت کا دعویٰ ہے کہ مریضوں کو اس کی بجائے سستی ادویات دی جائیں گی، جس کی تاثیر یکساں ہے۔ لیکن ڈاکٹروں کا ایک بڑا حصہ حکومت کی اس تھیوری کو ماننے کو تیار نہیں۔ میڈیکل ایسوسی ایشن سے وابستہ ڈاکٹرمانس گمتا نے کہاکہ ریاست میں 35,000 کلب ہر سال گرانٹ حاصل کرتے ہیں۔ حکومت درگا پوجا کے لیے گرانٹ فراہم کرے گی۔ اور کینسر کے مریضوں کو اسپتال سے دوائی نہیں ملے گی۔ اس سے بڑی بدقسمتی کیا ہو سکتی ہے۔ اسپتال صرف مفت دوائی فراہم کرتا ہے، تو ہورڈنگز کیوں لٹکائے؟'

ترنمول لیڈر ڈاکٹر شانتنو سین نے تاہم دعویٰ کیا کہ اس فیصلے کا مریضوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔ بعض ڈاکٹروں کو مہنگی دوائیں تجویز کرنے کی عادت ہوتی ہے۔ ان میں سے بعض نے پرائیویٹ چیمبرز میں مریضوں کو دیکھتے ہیں اور سرکاری اسپتال سے مفت دوائی فراہم کراتے ہیں۔ یہ فیصلہ اسے روکنے کے لیے کیا گیا ہے۔


ریاستی حکومت کو مرکز کے نیشنل ہیلتھ مشن سے ہر سال 600 کروڑ روپے ملتے ہیں۔ یہ رقم دوائیں خریدنے اور مریض کے مختلف ٹیسٹ کرنے کے لیے استعمال کی جائے۔ ایک اندازے کے مطابق مہنگی ادویات خریدنے پر 60 کروڑ روپے خرچ ہوتے ہیں۔ اس کے بجائے حکومت سستی ادویات دے کر سالانہ 12 کروڑ روپے بچائے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔