جامعہ تشدد کی جانچ شروع، مجرمانہ پس منظر کے 10 افراد گرفتار، ایک بھی طالب علم نہیں

15 دسمبر کو جامعہ نگر میں شہریت ترمیمی قانون کے خلاف مظاہرہ کیا گیا تھا۔ طلبا کے پرامن مظاہرے میں باہر کے بھی کچھ لوگ شامل ہو گئے تھے جنھوں نے ماحول خراب کیا۔ اس تشدد کی جانچ ایک خصوصی ٹیم کر رہی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

دہلی کے جامعہ نگر تشدد معاملہ میں دو دنوں بعد 10 افراد کی گرفتاری عمل میں آئی ہے۔ جامعہ تشدد واقعہ کی جانچ ایک خصوصی ٹیم کر رہی ہے جس نے پہلی کارروائی کے تحت ان 10 لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔ غور کرنے والی بات یہ ہے کہ گرفتار کیے گئے سبھی افراد مجرمانہ ریکارڈ رکھتے ہیں اور اس سے بھی زیادہ اہم یہ ہے کہ ان میں سے کوئی بھی طالب علم نہیں ہے۔ اس سے ظاہر ہے کہ مظاہرے میں طالب علموں نے کوئی ہنگامہ نہیں کیا تھا اور طلبا کے خلاف پولس کی کارروائی پر شبہات کے بادل مزید گہرا گئے ہیں۔ گرفتار ملزمین سے پولس پوچھ تاچھ کر رہی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ 40 سے 50 افراد نے جامعہ کا ماحول خراب کرنے کی کوشش کی اور خاموش احتجاجی مظاہرے کو پرتشدد بنا دیا۔

واضح رہے کہ اتوار یعنی 15 دسمبر کو جامعہ نگر میں شہریت ترمیمی قانون کے خلاف مظاہرہ کیا گیا تھا۔ طلبا کے مظاہرے میں باہر کے کچھ لوگ شامل ہوئے تھے۔ اس مظاہرے میں اچانک کچھ مظاہرین اور پولس کے درمیان جھڑپ ہوئی اور پھر کچھ لوگوں نے چار ڈی ٹی سی بسوں کو نذر آتش کر دیا۔ اس واقعہ کے بعد حالات سنگین ہو گئے اور پولس نے جامعہ ملیہ اسلامیہ کیمپس میں بلا اجازت داخل ہو کر معصوم اور بے قصور طالب علموں پر لاٹھی چارج شروع کر دیا۔

جامعہ ملیہ اسلامیہ میں پولس کے گھسنے اور لاٹھی چارج و آنسو گیس کے گولے داغے جانے کی کئی تصویریں اور حیران کرنے والے ویڈیو بھی سامنے آئے تھے۔ پولس پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ اس نے لائبریری میں گھس کر پڑھ رہے طلبا و طالبات کے ساتھ بربریت کا مظاہرہ کیا۔ جامعہ اسٹوڈنٹس نے بار بار یہ کہا کہ پرتشدد مظاہرہ میں یونیورسٹی سے کوئی بھی شامل نہیں تھا، لیکن پولس نے ان کی ایک نہیں سنی اور لڑکوں کے ساتھ ساتھ لڑکیوں کی بھی پٹائی کر دی۔

قابل ذکر ہے کہ طالبات پر ہوئے مظالم کے خلاف پیر کے روز الگ الگ یونیورسٹیوں کے طلبا سڑکوں پر اترے تھے اور پولس کی بریریت کے خلاف آواز اٹھائی تھی۔ وہیں اپوزیشن نے بھی پولس کارروائی کی سخت مذمت کی تھی۔ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے بھی پیر کو طالبات کی حمایت میں انڈیا گیٹ پر علامتی دھرنا دیا اور جامعہ کیمپس میں گھس کر طلبا کی پٹائی پر سوال کھڑے کیے تھے۔

next