’وزیر اعظم جیسنڈا کے جذبہ انسانیت کا شکریہ‘، مسلم مشاورت کا وفد کیوی سفیر سے ملاقی

وفد نے کہا، ’’نیوزی لینڈ میں 50 نمازیوں کی مسجد میں شہادت کے بعد وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن اور وہاں کی عوام نے جس جذبہ انسانیات کا لازوال مظاہرہ کیا ہے اسے انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے۔‘‘

تصویر بذریہ پریس ریلیز
تصویر بذریہ پریس ریلیز

پریس ریلیز

نئی دہلی: آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کے ایک وفد نے دہلی میں متعینہ کیوی (نیوزی لینڈ کی) سفیر محترمہ جونا کیمکرس سے ان کے سفارت خانہ میں ملاقات کر کے بھارتیہ مسلمانوں کی جانب سے بالخصوص اور یہاں کے عوام کی جانب سے بالعموم نیوزی لینڈ کے عوام اور وہاں کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن کے تئیں خیر سگالی اور یکجہتی کے جذبات کا اظہار کیا۔

کرائسٹ چرچ دہشت گردانہ حملہ کے متاثرین سے تعزیت کا اظہار کرتیں وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن
کرائسٹ چرچ دہشت گردانہ حملہ کے متاثرین سے تعزیت کا اظہار کرتیں وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن

وفد کے تمام شرکاء نے اپنے احساسات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ، آج جب دنیا کے مختلف علاقوں میں دہشت گردی اور قتل و غارت گری کا بازار گرم ہے اور خون مسلم کو ارزاں بنا دیا گیا ہے، ایسے وقت میں خود مسلمانوں پر ہی دہشد گردی کا بیجا، غلط اور گمراہ کن الزام عاید کیا جا رہا ہے۔ ایسی فضاء میں معصوم مسلمانوں کے خلاف نیوزی لینڈ میں ہوئے دہشت گردانہ حملہ، 50 نمازیوں کی مسجد میں شہادت اور بڑی تعداد میں انہیں زخمی کئے جانے کے سفاکانہ واقعہ کے بعد نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن، ان کی حکومت اور وہاں کی عوام نے مظلومین کے تئیں جس جذبہ انس و محبت اور خیر پسندی کا لازوال مظاہرہ کیا ہے اس کو صرف دنیا کے مسلمانوں نے ہی نہیں عام خیر امن و سلامتی کے خوگر انسانوں نے انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھا ہے اور اس عمل نے تاریخ پر ایک لازوال پیغام محبت ثبت کیا ہے، جو آج کی دنیا کے تمام ذمہ داران حکومت کے لئے غور و خوض اور عمل کے بہت سے پہلو اجاگر کئے ہیں۔

وفد میں صدر مشاورت نوید حامد، مولانہ اصغر علی امام مہدی سلفی امیر جمعیۃ اہل حدیث ہند، ڈاکٹر ظفر محمود صدر زکوٰة فاؤنڈیشن آف انڈیا، انتظار نعیم اسسٹنٹ سیکریٹری جماعت اسلامی ہند، مولانہ عبدالحمید نعمانی و شیخ منظور احمد جنرل سیکریٹریز مشاورت اور ثیث تیمی شریک تھے۔

صدر مشاورت نوید حامد نے سفیر نیو زیلینڈ کو وقت کے تقاضہ کے طور پر بین المذاہب رابطوں اور امن عالم کی فضا کو استدار کرنے کے لئے خود نیوزی لینڈ کے ذریعہ عالمی امن کانفرنس منعقد کروانے کی تجویز پیش کی جس کو انہوں نے بطور خاص نوٹ کر اس تجویز سے اتفاق کیا اور یقین دہانی فرمائی کہ اس تجویز کو وہ وزیر اعظم اور حکومت نیوزی لینڈ کو بھیجیں گی۔

وفد کی جانب سے سفیر کو ملک کے مسلم اداروں خصوصی طور سے مشاورت اور انڈیا اسلامک کلچرل سینٹر کو وزٹ کرنے کی مخلصانہ دعوت بھی پیش کی گئی جس کو انہوں نے غور کرنے کا وعدہ فرمایا اور اس پر انہوں نے شکریہ بھی ادا کیا۔

Published: 27 Mar 2019, 9:10 PM