بجرنگ دل کا فرمان: گربا و ڈانڈیا میں شرکت کے لئے غیر ہندؤں کا چیک ہو آدھار

صدیوں پرانی ہندوستان کی فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی تہذیب کو روند کر نئی تہذیب کی بنیاد ڈالنے کی کوشش میں شدت پسند ہندو تنظیم بجرنگ دل کا نیا فرمان آیا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

بجرنگ دل نے ہفتہ کے روز ’گربا اور ڈانڈیا ‘ تقریبات کا اہتمام کرنے والی تنطیموں سے کہاہے کہ غیر ہندو لوگوں کو جہاں گربا ہوتا ہے وہاں داخلہ کے لئے ان کا آدھار کارڈ چیک کرنا لازمی قرار دیں ۔ بجرنگ دل نے کہا ہے کہ اس کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے ۔

بجرنگ دل نے ایک کھلے خط میں دعوی کیا ہے کہ گزشتہ کچھ سالوں سے غیر ہندو نوجوان ان تقریبات میں داخل ہو کر گربا اور ڈانڈیا کرنے والی خواتین کے ساتھ بد تمیزی کرتے ہیں اور وہ منتظمین کے ساتھ مار پیٹ بھی کرتے ہیں۔

بجرنگ دل نے کہا ہے کہ اس کے علاوہ ایونٹ مینیجر غیر ہندو باؤنسروں کو کام پر رکھ رہے ہیں جن کی وجہ سے ان بدمعاشوں کو ان تقریبات میں داخل ہونے میں کوئی دشواری نہیں ہوتی۔ اس لئے اس معاملہ کو سنجیدگی سے لینے کی ضرورت ہے ۔

بجرنگ دل کی جانب سے یہ کوئی پہلا فرمان نہیں ہے وہ ویلنٹائن ڈے منانے والوں کی سخت مخالفت کرتے ہیں اور ان کو روکنے کے لئے اکثر تشدد پر اتر آتے ہیں۔ بنیادی طور پر یہ تنطیم اپنی سوچ کو سب پر تھوپنا چاہتی ہے جس کی وجہ سے ہندوستانی تہذیب کو شدید خطرہ ہے۔

ہندوستان کی تہذیب یہ ہے کہ یہاں غیر مسلم اپنے مسلم دوستوں کی مذہبی تقریبات میں شرکت کرتے ہیں اور اسی طرح مسلمان اپنے غیر مسلم دوستو ں کے ہر مذہبی تیوہار میں حصہ لیتے رہے ہیں چاہے وہ ہولی میں رنگ کھیلنا ہو، دیوالی میں پٹاخے چھوڑنا ہو یا پھر نوراتروں میں ڈانڈیا کھیلنا ہو۔

Published: 29 Sep 2019, 2:10 PM
next