کورونا وائرس: کولکاتا کی ’ناخدا مسجد‘ کا صدر دروازہ بند

ناخدا مسجد کی انتظامیہ کمیٹی کے ممبر نے کہا کہ ناخدا مسجد میں جماعت کی نماز بڑے پیمانے پر نہیں ہوگی۔ صرف 4 سے پانچ افراد ہی جماعت میں شریک ہوں گے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

کولکاتا: تاریخی ’ناخدا مسجد‘ نے اپنا صدر دروازہ بند کردیا ہے اور ملک بھر میں لاک ڈائون کے پیش نظر مسجد میں برے پیمانے پر جماعت پر پابندی عاید کردی ہے۔ ناخد مسجد انتظامیہ نے کہا ہے کہ مسجد میں جماعت معمول کے مطابق ہوں گی، مگر اس میں مسجد کے موذن، امام اور دیگر عملہ شریک ہوں گے۔

اس سے قبل بنگال امام ایسوسی ایشن نے فیصلہ کیا تھا کہ مساجد مکمل طور پر بند نہیں ہوں گی بلکہ آذان اور جماعت ہوتی رہے گی مگر زیادہ بھیڑ لگانے کی اجازت نہیں ہوگی۔

ناخدا مسجد کی انتظامیہ کمیٹی کے ممبر نے کہا کہ ناخدا مسجد میں جماعت کی نماز بڑے پیمانے پر نہیں ہوگی۔ صرف 4 سے پانچ افراد ہی جماعت میں شریک ہوں گے۔ لوگوں سے درخواست کی گئی ہے وہ اپنے گھروں میں ہی جماعت کا اہتمام کرلیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں حالات بہتر ہونے تک یہی صورت حال رہے گی۔

ایک سینئر مسلم پولس آفیسر کا کہنا ہے مسلم محلوں میں بھیڑ کم کرنے میں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ پولس کے بار بار اپیل کیے جانے کے بعد بڑی تعداد میں گھرو سے باہر محلوں میں بھیڑ لگا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا مسلم محلوں میں بھیڑ کم کرنے کے لئے مقامی ائمہ حضرات کی خدمات لی جا رہی ہیں۔

اس سے قبل ملک کے کئی معروف مذہبی اداروں بالخصوص دارالعلوم دیوبند، جمعیۃ علما ہند، جمعیۃ اہل حدیث نے بیان جاری کرتے ہوئے اپیل کی ہے کہ مسجد میں معمول کے مطابق آذان اور جماعت کا اہتمام کریں۔ مگر بھیڑ نہ لگائیں۔ اپنے گھروں میں ہی نماز کا اہتمام کریں۔ گزشتہ ہفتے مسجد ناخد انے اپیل جاری کرتے ہوئے کہا تھا کہ جمعہ نماز کے لئے آنے والے افراد اپنے گھروں سے ہی وضو اور سنت کی ادائیگی کر کے آئیں۔