فیروز آباد میں قیدی کی موت پر ہنگامہ، بھیڑ نے سٹی مجسٹریٹ کو کھدیڑا، پولیس نے کی ہوائی فائرنگ، ماحول کشیدہ

بائک چوری کے الزام میں 19 جون سے قید 27 سالہ آکاش کی 21 جون کی صبح موت ہو گئی جس کے بعد لوگوں نے جیل انتظامیہ کے خلاف ہنگامہ شروع کر دیا، حالات ایسے بنے کہ پولیس کو کئی راؤنڈ ہوائی فائرنگ کرنی پڑی۔

<div class="paragraphs"><p>تصویر سوشل میڈیا</p></div>

تصویر سوشل میڈیا

user

قومی آوازبیورو

فیروز آباد میں نگلا پچیا باشندہ ایک قیدی کی موت سے ناراض اہل خانہ اور بھیڑ نے آج زوردار ہنگامہ کیا اور پولیس پر اس قدر پتھراؤ کیا کہ سٹی مجسٹریٹ سمیت فورس کو ان سے دور بھاگنا پڑا۔ سٹی مجسٹریٹ تو کسی طرح اپنی جان بچا کر جائے وقوع سے فرار ہوئے۔ ناراض لوگوں نے اس گاڑی کو بھی نہیں بخشا جس گاڑی میں لاش رکھی ہوئی تھی، علاوہ ازیں مزید نصف درجن گاڑیاں مظاہرین کے غصے کی نذر ہو گئیں۔ حالات ایسے بن گئے کہ پولیس کو کئی راؤنڈ ہوائی فائرنگ کرنی پڑی۔

دراصل ضلع جیل میں بائک چوری کے الزام میں 27 سالہ آکاش کمار 19 جون سے بند تھا۔ جیل سپرنٹنڈنٹ کا کہنا ہے کہ جمعرات کی شب اس کی طبیعت خراب ہو گئی تھی۔ جیل کے اسپتال میں علاج کے لیے اسے داخل کرایا گیا تھا۔ جمعہ کی صبح پھر اس کی طبیعت بگڑی اور ٹراما سنٹر میں لایا گیا جہاں اس کی موت ہو گئی۔ بعد ازاں اس کی لاش کا پوسٹ مارٹم ڈاکٹروں کے ایک پینل نے کیا۔


جب اس پورے واقعہ کی خبر آکاش کے گھر والوں کو ہوئی تو کچھ تنظیموں کے کارکنان کے ساتھ انھوں نے جمعہ کی صبح ہی پوسٹ مارٹم گھر کے باہر دھرنا و مظاہرہ شروع کر دیا۔ شام کو پولیس کی دیکھ ریکھ میں لاش کو ایمبولنس سے گھر لے جایا جا رہا تھا، اس درمیان سہاگ نگر چوراہے پر لوگوں نے جام لگا دیا۔ پولیس کی گاڑی اور ایمبولنس کو روکنے کے بعد بھیڑ نے پتھراؤ شروع کر دیا۔ اس سے افرا تفری مچ گئی۔ بھیڑ نے ایمبولنس میں توڑ پھوڑ کی اور لاش کو باہر کھینچ لیا۔ حالات بے قابو ہونے پر ہوائی فائرنگ کرتے ہوئے پولیس نے تشدد پھیلانے والے لوگوں کو کھدیڑا۔ حالات اب بھی کشیدہ بنے ہوئے ہیں اور پولیس علاقے میں مستعد نظر آ رہی ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔