ہریانہ حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائے گی کانگریس، بھوپندر ہڈا کا اعلان

کانگریس لیڈر بھوپندر ہڈا نے کہا ہے کہ موجودہ ہریانہ حکومت سب سے بدعنوان حکومت ہے اور اس سے لوگوں کا اعتماد اٹھ گیا ہے۔ حکومت کو حمایت دینے والے کئی اراکین اسمبلی بھی حمایت واپس لے چکے ہیں۔

بھوپندر سنگھ ہڈا، تصویر آئی اے این ایس
بھوپندر سنگھ ہڈا، تصویر آئی اے این ایس
user

دھیریندر اوستھی

ہریانہ کے سابق وزیر اعلیٰ اور حزب مخالف لیڈر بھوپندر سنگھ ہڈا نے کہا ہے کہ ہریانہ کی موجودہ بی جے پی-جے جے پی حکومت سے لوگوں کا بھروسہ اٹھ چکا ہے اور کانگریس اس کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائے گی۔ انھوں نے کہا کہ حکومت کو حمایت دینے والے کئی اراکین اسمبلی استعفیٰ دے چکے ہیں اور حمایت واپسی کا اعلان بھی کر چکے ہیں۔ ایسے میں اس حکومت کو اقتدار میں رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔

چنڈی گڑھ میں صحافیوں سے بات چیت میں ہڈا نے کہا کہ ’’ہریانہ ایک طرف جہاں سب سے زیادہ بے روزگاری کی شکار ریاست میں شامل ہے وہیں اب کورونا وبا کے بعد مہنگائی کی مار سے بھی بے حال ہے۔ ہریانہ کبھی سب سے سستے پٹرول-ڈیزل کے لیے جانا جاتا تھا، لیکن آج حالات ایسے ہیں کہ کانگریس حکومت کے مقابلے تقریباً دوگنا ویٹ لگا کر بی جے پی قیادت والی حکومت اپنا خزانہ بھر رہی ہے۔‘‘

بھوپندر ہڈا نے مزید تفصیل بیان کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس حکومت میں ہریانہ میں ڈیزل پر 9.2 فیصد ویٹ تھا، لیکن آج تقریباً 18 فیصد ٹیکس حکومت وصول کر رہی ہے۔ یہی حال پٹرول کا بھی ہے۔ سابق وزیر اعلیٰ نے ریاست کی اتحادی حکومت پر حملہ آور رخ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ یہ حکومت بے روزگاری، مہنگائی اور بدعنوانی بڑھانے کی پالیسی پر کام کر رہی ہے۔

چنڈی گڑھ میں بھوپندر نے نامہ نگاروں سے بات چیت کے دوران کسان تحریک کے حوالے سے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہا کہ حکومت کو جلد کسان تحریک کو ختم کرنے کے لیے کوئی حل تلاش کرنا چاہیے۔ حکومت کو اپنی طرف سے دو قدم آگے بڑھاتے ہوئے کسانوں سے بات کرتے ہوئے ان کے مطالبات ماننے چاہئیں۔ ہڈا نے کسانوں کے ساتھ عوامی مسائل کی طرف بھی نامہ نگاروں کی توجہ مبذول کرائی اور حکومت کی غلط پالیسیوں کی نشاندہی کی۔ انھوں نے کہا کہ حکومت کو لوگوں کی پریشانی سمجھنی چاہیے اور اسے مہنگائی بڑھانے کی جگہ گھوٹالوں پر نکیل کسنی چاہیے۔ گھوٹالے رکیں گے تو ریاست کی آمدنی خود بخود بڑھے گی۔ ہڈا نے کہا کہ ’’نومبر 2020 میں زہریلی شراب پینے سے 50-40 لوگوں کی موت ہو گئی تھی۔ ریاست میں بڑا شراب گھوٹالہ سامنے آیا تھا۔ ایس آئی ٹی نے اس کی جانچ رپورٹ حکومت کو سونپ دی ہے، لیکن حکومت اسے برسرعام کرنے کو تیار نہیں ہے۔ اسی طرح رجسٹری گھوٹالے کی رپورٹ کو بھی حکومت الماری میں دبا کر بیٹھ گئی ہے۔‘‘

سابق وزیر اعلیٰ نے کہا کہ حکومت کو یہ جانچ رپورٹ سب کے سامنے پیش کرنی چاہیے۔ اگر رپورٹ میں موجود باتیں عوام کے سامنے آتی ہیں تو یہ حکومت ہل جائے گی، کیونکہ اس میں کئی بڑے ناموں کا انکشاف ممکن ہے۔ ہڈا نے اس کے علاوہ یہ بھی کہا کہ بجلی محکمہ کی ایس ڈی او بھرتی نے ثابت کر دیا ہے کہ ملازمتوں میں ریاستوں کے نوجوانوں کو 75 فیصد ریزرویشن کا فیصلہ بھی محض جملہ ہے۔ ایک طرف حکومت دعویٰ کرتی ہے کہ وہ پرائیویٹ ملازمتوں میں بھی ہریانہ کے لوگوں کو ریزرویشن دے گی، اور دوسری طرف حکومت خود کی بھرتیوں میں مقامی نوجوانوں کی جگہ دیگر ریاستوں کے 75 فیصد لوگوں کو ملازمت دے رہی ہے۔

ہڈا نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ جنرل کلاس کے بعد بی جے پی-جے جے پی حکومت اب ریزرو کلاس ’ایس سی اور بی سی‘ کے ساتھ بھی بہت بڑا کھلواڑ کر رہی ہے۔ حکومت نے ہریانہ ڈومیسائل کے لیے 15 سال رہائش کی حد گھٹا کر اب 5 سال کر دی ہے۔ یعنی کوئی بھی شخص 5 سال تک ہریانہ میں رہ کر یہاں کا ڈومیسائل حاصل کر سکتا ہے۔ اس کا سیدھا اثر ہریانہ میں ایس سی اور بی سی طبقات کے مفادات پر پڑے گا۔ کیونکہ دیگر ریاست کے لوگ یہاں کا ڈومیسائل حاصل کر کے ریزرو کلاس کی ملازمتوں میں بھی اب اپلائی کر سکیں گے۔

حزب مخالف لیڈر نے حکومت کی نئی کھیل پالیسی پر بھی سنگین سوال اٹھائے۔ انھوں نے کہا کہ اتحادی حکومت نے پوری دنیا میں تعریف کی گئی کانگریس حکومت کی ’میڈل لاؤ، عہدہ پاؤ‘ پالیسی کو پوری طرح سے ختم کر دیا ہے۔ بین الاقوامی سطح کے کھلاڑیوں سے ایچ سی ایس، اے پی ایس اور پروموشن کا اختیار چھین لیا گیا ہے۔ نئی پالیسی کے تحت میڈل فاتح کھلاڑی اب جونیئر کوچ سے ڈپٹی ڈائریکٹر تک کے عہدوں پر ہی تقرریاں حاصل کر پائیں گے۔ نئی پالیسی پیرا اولمپک کھلاڑیوں کے ساتھ تفریق کرتی ہے۔ پیرا اولمپین کی تقرری کو گروپ-بی عہدوں تک محدود کر دیا گیا ہے۔ یہ ان کے آئینی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next