مرکزی جانچ ایجنسیوں کے ذریعے میری اور خاندن کی جاسوسی کی جارہی ہے، نواب ملک

نواب ملک نے کہا کہ اگر کوئی ان کے اور ان کے خاندان کے بارے میں کوئی معلومات حاصل کرنا چاہتا ہے تو وہ ان کے پاس آئے وہ اس کو درکار معلومات دینے کے لئے تیار ہیں۔

تصویر قومی آواز
تصویر قومی آواز
user

یو این آئی

مرکزی جانچ ایجنسیوں کے ذریعے میرے اور میرے خاندن کے لوگوں کی جاسوسی کی جارہی ہے۔ اس کے خاطرخواہ ثبوت ہیں اور اس کی شکایت مرکزی وزیرداخلہ وممبئی پولیس سے کی جائے گی۔ یہ اطلاع این سی پی کے قومی ترجمان واقلیتی امور کے وزیر نواب ملک نے دی ۔

نواب ملک نے کہا کہ جب میں دبئی میں ایک پرگرام میں شرکت کے لئے گیا تھا تو دو افراد میرے گھر، اسکول اور نواسوں کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کی کوشش کر رہے تھے۔ شک ہونے پر جب ان سے لوگوں نے تفتیش کرنے کی کوشش کی تو وہ بھاگ گئے۔ان دونوں افراد کی تصویر سوشل میڈیا پر شیئرکرنے کے بعد ان کی پوری معلومات ہمیں حاصل ہوگئی ہے۔ ’کو‘ ہینڈل پر انہوں نے میرے بارے میں معلومات شیئر کی ہیں۔


نواب ملک نے یہ بھی واضح کیا کہ اگر کوئی میرے اور میرے خاندان کے بارے میں کوئی معلومات حاصل کرنا چاہتا ہے تو وہ ان کے پاس آئے وہ اس کو درکار معلومات دینے کے لئے تیار ہیں۔

نواب ملک نے کہا کہ ان کے خلاف کچھ مرکزی تفتیشی ایجنسیوں کے افسران واٹس ایپ پر مسودہ تیار کرکے ای میل کے ذریعے جھوٹی شکایت درج کرنے کے لئے کہہ رہے ہیں۔ اس ضمن میں مرکزی ایجنسیوں کے واٹس ایپ چیٹ کے ثبوت میرے ہاتھ لگے ہیں۔ نواب ملک نے یہ واضح اشارہ دیا ہے کہ اگر مرکزی حکومت ریاستی وزراء کو پھنسانے کی کوشش کرے گی تو اسے ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا۔


انہوں نے مزید کہا کہ مرکزی وزیرداخلہ کے تحت کام کرنے والے افسران اگر اس طرح کی کارروائی کریں گے تو وہ اسے دیکھیں گے لیکن اس طرح کی حرکتیں کرکے خوفزدہ کرنے کی کوشش اگر مرکزی تفتیشی ایجنسیاں کریں گی تووہ اس طرح کی چالوں سے خوفزدہ نہیں ہونگے۔ نواب ملک نے کہا کہ اگر کسی وزیر پر جاسوسی کے ذریعے جھوٹے الزامات لگانے کی کوشش کی گئی تو یہ سنگین معاملہ ہے اس لئے اس کی شکایت مرکزی وزیرداخلہ اور ممبئی پولیس کمشنر سے کی جائے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔