بنگال حکومت کے میگا پروجیکٹ ’دوارے راشن‘ پر روک لگانے کی درخواست کلکتہ ہائی کورٹ نے مسترد کر دی

راشن ڈیلروں نے کلکتہ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی کہ اس پروجیکٹ سے ان کے حقوق متاثر ہو رہے ہیں اور ان کے پاس گھر گھر راشن پہنچانے کے لئے انفراسٹکچر بھی نہیں ہے۔

کلکتہ ہائی کورٹ / تصویر آئی اے این ایس
کلکتہ ہائی کورٹ / تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کولکاتا: کلکتہ ہائی کورٹ نے ریاستی حکومت کے میگا پروجیکٹ ’’دوارے راشن ‘‘ پر روک لگانے سے انکار کردیا ہے۔ راشن ڈیلروں نے اس پروجیکٹ کے خلاف کلکتہ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی تھی کہ اس پروجیکٹ سے ان کے حقوق متاثر ہو رہے ہیں اور ان کے پاس گھر گھر راشن پہنچانے کے لئے انفراسٹکچر نہیں ہے اور اس سے پڑنے والے مالی بوجھ سے نقصانات ہوسکتے ہیں۔ تاہم جسٹس امریتا سنہا نے درخواست خارج کردی۔ واضح رہے کہ تیسری مرتبہ حکومت سنبھالنے کے فوراً بعد وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے ریاست میں ’’دوارے راشن‘‘ (گھر گھر راشن) اسکیم شروع کرنے کا اعلان کیا۔ اس سکیم کی خصوصیت یہ ہے کہ راشن ڈیلر راشن لے کر گھروں تک پہنچیں گے۔

وکیل کلیان بنرجی نے عدالت میں ریاستی حکومت کا موقف پیش کرتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکومت صارفین کی سہولت کے لیے یہ پروجیکٹ شروع کر رہی ہے۔ نتیجے کے طور پر اسے کسی تیسرے فریق کے ذریعہ روک نہیں لگایا جا سکتا ہے۔ وزیر خوراک رتھین گھوش نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ پروجیکٹ شروع ہونے سے پہلے ہم نے تمام راشن ڈیلرز کو بلایا اور پروجیکٹ کے تعلق سے تمام باتیں بتائی ہیں۔ اس کے بعد بھی کچھ ڈیلرز نے عدالت سے رجوع کیا۔ ممتا بنرجی نے یہ کام عوام کی بھلائی کے لیے شروع کیا ہے۔ اس فیصلے سے ریاستی انتظامیہ کو عافیت ملی ہے۔ عدالت کے فیصلے کے بعد جلد ہی یہ اسکیم شروع ہوجائے گی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔