بی جے پی مذہب کی آڑ میں گھٹیا سیاست کر رہی ہے: وزیر اسلم شیخ

کیا ملک کورونا سے پاک ہوگیا ہے؟ کیا ملک میں صورتحال معمول پر آگئی ہے؟ کیا کورونا کی دوا ہمیں مل گئی ہے؟پھر یہ سیاست کیوں؟

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

کورونا بحران کے دوران آنے والے تہواروں کو تمام مذاہب کے لوگوں نے پر امن اور صبر و تحمل کے ساتھ منایا، کسی بھی تہوار کو منانے کے دوران انتظامیہ کو اس بات کا خیال رکھنا ضروری ہے کہ کورونا انفیکشن سے بچنے کے لئے ہجوم نہ ہو لیکن بی جے پی مذہب کی آڑ میں گندی اور گھٹیا سیاست کر رہی ہے۔ چھٹ پوجا سے متعلق فیصلہ کورونا انفیکشن کی روک تھام کو مدنظر رکھ کر لیا گیا ہے۔ مذکورہ خیالات کا اظہار ممبئی شہر کے نگراں وزیر اسلم شیخ نے کیا ہے۔

میڈیا سے بات چیت کے دوران اسلم شیخ نے جے پی لیڈران پر کورونا وبا کے دوران مذہب کی آڑ میں گندی سیاست کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ وہ بی جے پی لیڈران سے پوچھنا چاہتے ہیں کہ’’ کیا ملک کورونا سے پاک ہوگیا ہے؟ کیا ملک میں صورتحال معمول پر آگئی ہے؟ کیا کورونا کی دوا ہمیں مل گئی ہے؟" اگر ان سب سوالوں کا جواب' نہیں' ہے تو پھر اس وبا کے دوران بی جے پی اپنے مذہبی ایجنڈے پر کیوں عمل پیرا ہے؟‘‘


ممبئی شہر کے نگراں وزیر اسلم شیخ نے مزید کہا کہ بی جے پی لیڈران مذہب پر مبنی گھٹیا سیاست کے ذریعے عوام کی زندگیوں کے ساتھ کھیل رہے ہیں، یہاں تک کہ ریاست میں مندروں کو کھولنے کے معاملے میں بی جے پی نے اپنے مذہبی اور سیاسی ایجنڈے کو آگے بڑھانے کا کام کیا تھا اور اب بھی کورونا کی صورتحال کو نظر انداز کرتے ہوئے بی جے پی کے لیڈران چھٹ پوجا کے معاملے میں سیاست کر رہے ہیں۔

واضح رہے اس سے قبل مہاراشٹر حکومت اور بی جےپی عبادت گاہیں کھولنے کے معاملہ میں آمنے سامنے رہے ہیں۔ اس میں کشیدگی اس وقت اپنے شباب پر پہنچ گئی تھی جب ریاست کے گورنر نے وزیر اعلی کو جو خط لکھا تھا اس میں انہوں نے وزیراعلی کے مذہبی رجحان پر ہی سوال اٹھا دئے تھے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔