ہمارے دباؤ میں گھبراکر بی جے پی نے وزیر اعلی تبدیل کیا، ہاردک پٹیل

گجرات کانگریس کے کارگزار صدر ہاردک پٹیل نے دعوی کیا ہے کہ کانگریس کی تحریک سے بی جے پی گھبرا گئی اور گھبرہاہٹ میں وزیر اعلی تبدیل کیا ۔

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

پانچ سال وزیر اعلی بنے رہنے کے بعد اور جب اسمبلی انتخابات میں صرف ایک سال کی مدت رہ گئی ہو اس وقت وجے روپانی کے استعفے نے سب کو حیران تو کیا ہے اور یہ بھی واضح کر دیا ہے کہ بی جے پی کو اس بات کا اندازہ ہو گیا تھا کہ وجے روپانی کی قیادت میں گجرات جیت نہیں سکتے۔ بی جے پی نے ان کی جگہ جس کو وزیر اعلی بنا یا ہے اس کے انتخاب پر بھی سب کو حیرانی ہوئی ہے ۔

بی جے پی نے وجے روپانی کی جگہ پٹیل سماج کے پہلی مرتبہ بنے رکن اسمبلی بھوپیندر پٹیل کو وزیر اعلی بنایا ہے ۔ مبصرین کی رائے یہ ہے کہ پٹیل سماج کو اپنی جانب راغب کرنے کی وجہ سے انہیں وزیر اعلی بنایا گیا ہے۔ واضح رہے گزشتہ اسمبلی انتخابات سے ایک سال پہلے پٹیل سماج کی ناراضگی کو دیکھتے ہوئے پٹیل سماج کی آنندی بین پٹیل کو وزیر اعلی کے عہدے سے ہٹایا دیا تھا ۔ یعنی پٹیل سماج کی ناراضگی کی وجہ سے پہلے پٹیل وزیر اعلی ہٹایا گیا اور اب بنایا گیا۔ یہ وجہ سمجھ نہیں آتی ۔


گجرات میں کانگریس کے کارگزار صدر نوجوان ہاردک پٹیل نے ایک نیوز پورٹل کو دئے اپنے انٹرویو میں کہا ہے کہ اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ وزیر اعلی کا تعلق کس طبقہ سے ہے کیونکہ وزیر اعلی پوری ریاست کا ہوتا ہے لیکن بی جے پی نے جو وزیر اعلی کو بدلنے کا قدم اٹھایا ہے وہ کانگریس کی جاری تحریک سے گھبراکر اٹھایا ہے ۔

ہاردک پٹیل نے مودی فیکٹر کو بھی پوری طرح خارج کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ اسمبلی انتخابات میں وزیر اعظم مودی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا تھا لیکن پھر بھی صر ف دس سیٹوں کا معمولی فرق ہی تھا تو دونو پارٹیو میں ۔ انہوں نے کہا کہ بڑھتی بے روزگاری اور کوورونا کی وبا کے دوران حکومت کی بد انتظامی کی وجہ سے گجرات کے لوگوں میں بی جے پی سے سخت ناراضگی ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔