سرمائی اجلاس میں کرپٹو کرنسی پر مکمل پابندی نہیں بلکہ ریگیولیٹ کرنے کے لئے بل لایا جائے گا

بل "ہندوستان میں تمام نجی کرپٹو کرنسیوں کو ممنوع قرار دینے کی کوشش کرتا ہے" لیکن "بنیادی ٹیکنالوجی اور اس کے استعمال کو فروغ دینے کے لئے کچھ استثناء" کی اجازت دیتا ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

مرکزی حکومت کرپٹو کرنسی کو ریگولیٹ کرنے کے لیے پارلیمنٹ کے آئندہ سرمائی اجلاس میں ایک بل پیش کرے گی۔ لوک سبھا کی ویب سائٹ کے مطابق، کرپٹو کرنسی اینڈ ریگولیشن آف آفیشل ڈیجیٹل کرنسی بل 29 نومبر سے شروع ہونے والے سرمائی اجلاس میں متعارف کرانے کے لیے درج 26 بلوں میں سے ایک ہے ۔

نیوز 18 کے پورٹل پر شائع خبر کے مطابق یہ بی جے پی کے رہنما جینت سنہا کی سربراہی میں ایک پارلیمانی پینل کے مختلف اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ کرپٹو فائنانس کے فائدے اور نقصانات پر تبادلہ خیال کے ایک ہفتے بعد آیا ہے، اور ایک معاہدہ طے پایا تھا کہ ڈیجیٹل کرنسیوں کو روکا نہیں جا سکتا لیکن ان کو باقاعدہ بنایا جانا چاہیے۔


بل "ہندوستان میں تمام نجی کرپٹو کرنسیوں کو ممنوع قرار دینے کی کوشش کرتا ہے" لیکن "بنیادی ٹیکنالوجی اور اس کے استعمال کو فروغ دینے کے لئے کچھ استثناء" کی اجازت دیتا ہے۔ اس کا مقصد آر بی آئی کے ذریعہ جاری کی جانے والی سرکاری ڈیجیٹل کرنسی کی تخلیق کے لیے "ایک سہولتی فریم ورک" بنانا ہے۔

ضابطوں کی کمی کے درمیان ملک میں اس کی مضبوط ترقی کی بدولت، ہندوستان کرپٹو کرنسیوں پر گہری توجہ دے رہا ہے، لیکن حکومت ڈیجیٹل کرنسی کے شعبے کو منظم کرنے کے لیے قانون لانے کے لیے بے چین ہے۔


وزیر اعظم نریندر مودی نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ کرپٹو کرنسیوں کو "غلط ہاتھوں میں نہیں پڑنا چاہیے"، تمام جمہوری ممالک پر زور دیا کہ وہ اکٹھے ہوں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ ایسی چیزیں نہ ہوں۔ منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی معاونت سے بچنے کے لیے کرپٹو کرنسی پر مکمل پابندی لگانے کے بجائے اس پر مضبوط ریگولیٹری کنٹرول۔

تمام 26 بلوں میں سب سے اہم فارم لاز ریپیل بل، 2021 ہوگا جو کہ مرکز کی طرف سے پچھلے سال پیش کیے گئے تین فارم قوانین کو رد کر دے گا۔ پی ایم مودی نے گزشتہ ہفتے اعلان کیا تھا کہ حکومت اس سرمائی اجلاس میں تینوں فارم قوانین کو منسوخ کرنے کے لیے ایک بل پیش کرے گی کیونکہ وہ کسانوں اور فارم یونینوں کو تینوں قانون کی اہمیت کو سمجھنے میں ناکام رہی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔