کیا اومیکرون سے بچے زیادہ متاثر ہو سکتے ہیں؟

فی الحال بچوں کے لیے زیادہ ویکسین دستیاب نہیں ہیں اور صرف چند ممالک نے بچوں کے لیے ویکسین شروع کی ہے۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) یعنی عالمی طبی تنظیم کی چیف سائنسدان ڈاکٹر سومیا سوامیناتھن نے کہا کہ کووڈ 19 کے ڈیلٹا ویرینٹ کے مقابلے اومیکرون ویرینٹ دوبارہ انفیکشن کرنے میں تین گنا زیادہ عام ہے۔

ڈاکٹر سوامیناتھن نے نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ مختلف قسموں پر اعداد و شمار حاصل کرنے میں ابھی وقت لگے گا، لیکن اس وقت سائنسدان جو جانتے ہیں وہ صرف یہ ہے کہ جنوبی افریقہ میں اومیکرون ہے۔


اومیکرون انفیکشن کی طبی خصوصیات کو سمجھنے کے یہ ابھی ابتدائی دن ہیں ۔ کیسوں میں اضافے اور ہسپتال میں داخل ہونے کے درمیان ایک وقفہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہسپتال میں داخل ہونے کی شرحوں کا مطالعہ کرنے کے لیے دو سے تین ہفتوں تک انتظار کرنا چاہیے تاکہ یہ معلوم ہو سکے کہ یہ بیماری کتنی شدید ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ "جنوبی افریقہ میں اومیکرون کی مختلف قسموں کے ساتھ کیسز تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ رپورٹس بتاتی ہیں کہ اس ملک میں زیادہ بچے اس سے متاثر ہو رہے ہیں اور یہ بھی حقیقت ہے کہ جنوبی افریقہ میں جانچ کی شرح زیادہ ہے ۔

ڈاکٹر سوامی ناتھن نے نشاندہی کی کہ فی الحال بچوں کے لیے زیادہ ویکسین دستیاب نہیں ہیں اور صرف چند ممالک نے بچوں کے لیے ویکسین شروع کی ہے اور اس کی وجہ سے کیسز میں ممکنہ اضافے پر خبردار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ’’بچوں کے لیے زیادہ ویکسین دستیاب نہیں ہیں اور بہت کم ممالک بچوں کو ویکسین دیتے ہیں۔ جب کیسز بڑھتے ہیں تو بچے اور ٹیکے نہ لگوانے والے زیادہ انفیکشن کا شکار ہو سکتے ہیں۔ ہم اب بھی اعداد و شمار کا انتظار کر رہے ہیں تاکہ بچوں پر omicron کے مختلف اثرات کا نتیجہ نکالا جا سکے۔‘‘


انہوں نے کہا کہ تمام ممالک کو عمر اور علاقے کے لحاظ سے ویکسین کے ڈیٹا کا مطالعہ کرنا چاہیے تاکہ ان لوگوں کا اندازہ لگایا جا سکے جو چھوٹ گئے ہیں اور ’’ترجیح یہ ہونی چاہیے کہ 18 سال سے زیادہ عمر کے تمام لوگوں کو ویکسین لگائی جائے تاکہ ٹرانسمیشن کو کم کیا جا سکے۔‘‘

ڈاکٹر سومیا سوامی ناتھن نے کہا کہ ’’ہم وبائی مرض میں مزید ڈیٹا شیئرنگ چاہتے ہیں اور ہمیں ان ممالک کی مدد کرنے کی ضرورت ہے جو مختلف قسموں اور ڈیٹا کو ظاہر کر رہے ہیں۔ ہمیں ممالک کے درمیان ایک مربوط معاہدے کی ضرورت ہے تاکہ گھٹنے ٹیکنے والے ردعمل کا اظہار نہ کیا جائے۔‘‘

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔