اگنی پتھ اسکیم: اگنی ویر-وایو میں پہلے ہی دن 3800 امیدواروں نے کرایا رجسٹریشن

صبح 10 بجے سے شام 5.30 بجے تک تقریباً 3800 امیدواروں نے اگنی پتھ اسکیم کے لیے فضائیہ کی ویب سائٹ پر اگنی ویر وایو کے لیے رجسٹر کیا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

کئی ریاستوں میں پرتشدد احتجاجی مظاہروں کے ایک ہفتے بعد 24 جون کو اگنی پتھ اسکیم کے تحت ’اگنی ویر‘ بننے کے لیے رجسٹریشن کی کھڑکی کھل گئی۔ اگنی پتھ منصوبہ کے تحت سب سے پہلے ہندوستانی فضائیہ میں بھرتی کا عمل شروع ہوا ہے۔ فضائیہ نے اس سلسلے میں ٹوئٹر پر جانکاری دیتے ہوئے کہا ہے کہ ’اگنی ویر وایو‘ کے لیے درخواست کے لیے رجسٹریشن وِنڈو آج صبح 10 بجے سے کھلا۔ صبح 10 بجے سے شام 5.30 بجے تک تقریباً 3800 امیدواروں نے اگنی پتھ اسکیم کے لیے فضائیہ کی ویب سائٹ پر اگنی ویر وایو کے لیے رجسٹر کیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ فضائیہ کی انڈکشن ٹائم لائن کے مطابق پہلے مرحلہ میں 24 جون سے 5 جولائی تک اگنی ویر وایو کا رجسٹریشن ہوگا۔ 24 سے 31 جولائی تک آن لائن اسٹار امتحان (250 سنٹرس پر) کا انعقاد عمل میں آئے گا اور پھر 10 اگست کو دوسرے مرحلے کے لیے کال لیٹر بھیجا جائے گا۔ دوسرے مرحلہ میں 21 اگست سے 28 اگست تک فیز 2 چلے گا جو کہ اگنی ویر-وایو سلیکشن سنٹرس میں ہوگا۔ 29 اگست سے 8 نومبر تک طبی جانچ وغیرہ کا عمل انجام پائے گا۔ تیسرا مرحلہ ریزلٹ اور انرولمنٹ کا ہوگا۔ اس کے تحت یکم دسمبر 2022 کو پروویزنل سلیکٹ لسٹ جاری ہوگا۔ 11 دسمبر 2022 کو انرولمنٹ لسٹ اور کال لیٹر دیا جائے گا۔ 22 سے 29 دسمبر 2022 تک کا وقت انرولمنٹ کے لیے ہوگا، اور پھر 30 دسمبر 2022 سے کورس شروع ہو جائے گا۔


واضح رہے کہ گزشتہ 14 جون کو اگنی پتھ اسکیم پیش کرتے ہوئے حکومت نے کہا تھا کہ 17 سال 6 ماہ سے 21 سال (بعد میں زیادہ سے زیادہ عمر کی حد 23 سال کر دی گئی، لیکن یہ صرف 2022 کے لیے ہی ہے) کی عمر تک کے نوجوانوں کو چار سال کی مدت کے لیے بھرتی کیا جائے گا جن میں سے 25 فیصد کو بعد میں مستقل سروس کے لیے رکھا جائے گا۔ اس کے بعد ملک کے کئی حصوں میں اس منصوبہ کے خلاف پرتشدد مظاہرے شروع ہو گئے تھے۔ نوجوانوں کی ناراضگی اس بات کو لے کر ہے کہ 75 فیصد فوجی چار سال بعد بے روزگار ہو جائیں گے، اور انھیں فوجیوں جیسی سہولیات بھی مہیا نہیں ہوگی۔ کئی اپوزیشن پارٹیوں اور فوجی ماہرین نے اس اگنی پتھ اسکیم کی تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس سے مسلح افواج کی صلاحیتوں پر منفی اثر پڑے گا۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔