راجستھان: جوس پی کر 9 افراد ہوئے کورونا پازیٹو، خبر پھیلتے ہی مچی افرا تفری

جوس سنٹر میں کام کرنے والا ایک ملازم بیمار پڑ گیا تھا اور جب اس کا کورونا ٹیسٹ ہوا تو وہ پازیٹو پایا گیا۔ بعد ازاں وہاں کیمپ لگا کر جوس پینے والوں کا ٹیسٹ کرایا گیا تو پتہ چلا کہ 9 افراد پازیٹو ہیں۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

اَن لاک 1.0 کے تحت ہندوستان میں کاروباری سرگرمیاں شروع تو کر دی گئی ہیں، لیکن لوگوں پر کورونا کا خطرہ کافی بڑھ گیا ہے۔ اس کی ایک مثال راجستھان کے شہر کوٹہ میں دیکھنے کو ملی جہاں جوس پی کر 9 افراد کورونا کے شکار ہو گئے۔ دراصل اَن لاک 1.0 میں حکومت نے کچھ شرائط کے ساتھ جوس کی دکانوں کو بھی کھولنے کی بھی اجازت دی ہوئی ہے، اور اس کا نتیجہ کوٹہ میں دیکھنے کو ملا۔

میڈیا ذرائع سے موصول ہو رہی خبروں کے مطابق کوٹہ کے چوپاٹی بازار میں ایک جوس سنٹر کی دکان سے جوس پینے والے 9 لوگوں کی طبیعت خراب ہو گئی۔ جب ان کا کورونا ٹیسٹ کرایا گیا تو وہ پازیٹو پائے گئے۔ اس خبر سے پورے شہر میں افرا تفری کا ماحول پیدا ہو گیا۔ کوٹہ ہی نہیں، جوس پی کر کورونا پازیٹو ہونے کی خبر جہاں تک پہنچی وہاں کے لوگوں میں چہ می گوئیاں شروع ہو گئیں۔ اس خبر سے جوس کے کاروبار کو جو نقصان پہنچے گا وہ تو ایک الگ بات ہے، لیکن باتیں تو اب یہ گشت کر رہی ہیں کہ کمیونٹی پھیلاؤ کا خطرہ بہت بڑھ گیا ہے۔

بہر حال، بتایا جا رہا ہے کہ چوپاٹی واقع جوس سنٹر پر بڑی تعداد میں لوگ جوس پینے کے لیے پہنچتے ہیں۔ اس درمیان جوس سنٹر کا ایک ملازم بیمار ہو گیا۔ اس کے بعد جب اس کا کورونا ٹیسٹ کرایا گیا تو وہ پازیٹو نکلا۔ اس خبر کے بعد محکمہ صحت فکرمند ہوئی اور فوری طور پر جوس سنٹر کو بند کروا دیا۔ بعد ازاں محکمہ نے ایک نوٹس جاری کر کے ان سبھی لوگوں سے جوس سنٹر پر کورونا ٹیسٹ کے لیے لگنے والے کیمپ میں پہنچنے کی گزارش کی جنھوں نے ایک خاص مدت میں اس جوس سنٹر پر جوس پیا تھا۔ ان میں سے کئی لوگوں نے دن بھر لائن میں لگ کر کیمپ میں کورونا کی جانچ کرائی۔ جب سبھی لوگوں کی رپورٹ سامنے آئی تو پتہ چلا کہ دو خاتون سمیت 9 لوگ کورونا کی زد میں آ چکے ہیں۔

Published: 27 Jun 2020, 12:59 PM
next