مرکزی حکومت کی ہر شرط قبول، نام کے بغیر کام کریں گے: کیجریوال

دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے ہفتہ کے روز جائزہ میٹنگ طلب کی تھی، جس کے بعد انہوں نے کہا کہ وہ مرکزی حکومت کی ہر شرط قبول کرنے کے لئے تیار ہیں

دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال / آئی اے این ایس
دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال / آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: قومی راجدھانی دہلی میں راشن کی ڈور اسٹیپ ڈلیوری کے عمل پر مرکزی حکومت اور ریاست کے درمیان تکرار اب انجام تک پہنچ گئی ہے۔ مرکزی حکومت کی جانب سے گھر گھر راشن یوجنا پر روک لگائے جانے کے بعد وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے فیصلہ لیا ہے کہ اب کسی اسکیم کا کوئی نام نہیں ہوگا اور عوام کو ایسے ہی راشن پہنچایا جائے گا۔ علاوہ ازیں، کیجریوال نے کہا کہ وہ مرکزی حکومت کی ہر شرط ماننے کو تیار ہیں۔

خیال رہے کہ ہفتہ کے روز وزیر اعلیٰ کیجریوال نے جائزہ اجلاس طلب کیا تھا، جس کے بعد انہوں نے پریس کانفرنس کر کے کہا کہ وہ مرکزی حکومت کی ہر شرط ماننے کے لئے تیار ہیں۔ وزیر اعلیٰ کیجریوال نے کہا کہ یہ 20 برس پرانا خواب تھا کہ غریبوں کو صاف ستھرا اور آسانی سے راشن فراہم ہو۔

اروند کیجریوال نے کہا کہ جب وہ اقتدار میں نہیں تھے، تو انہوں نے یہ خواب دیکھا تھا۔ راشن کی چوری کی جا رہی تھی۔ راشن مافیا پوری طرح حاوی تھا۔ مخالفت کرنے پر راشن مافیا اٹیک کیا کرتا تھا۔ پھر دہلی میں جب عآپ کی حکومت بن گئی تو فیصلہ لینے کا حق مل گیا۔ اس کے بعد اس منصوبہ پر ذاتی طور پر کام کیا کہ کس طرح غریبوں کو راشن پہنچانا ہے اسے لے کر منصوبہ بنایا گیا۔ کیجریوال نے کہا کہ ’’ہم نے چار سال پہلے اس منصوبہ پر کام شروع کیا تھا، کافی تکلیفیں آئیں۔ راشن مافیا کافی طاقت ور ہیں۔ یہ انقلابی منصوبہ ہے۔ راشن مافیا آسانی سے کام نہیں کرنے دیں گے۔‘‘

وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ ان کا مقصد ایمانداری سے عوام تک راشن پہنچانا ہے اور وہ یہ منصوبہ کریڈٹ لینے کے لئے نہیں لائے تھے۔ ان کا مقصد غریبوں کی پریشانیوں کا ازالہ کرنا تھا۔ انہوں نے کہا ’مکھیہ منتری گھر گھر راشن یوجنا شرع ہونے جا رہی تھی۔ اب تک دکان سے راشن ملتا تھا، لمبی قطاروں میں لگنا پڑتا تھا۔ حکومت نے اس کا حل نکالتے ہوئے پیک آٹا، چاول گھر بھجوانے کا فیصلہ کیا۔ 25 مارچ سے یہ اسکیم لاگو ہونے جا رہی تھی لیکن مرکزی حکومت نے انکار کر دیا۔ مرکز کے اس فیصلہ سے بہت تکلیف پہنچی ہے۔‘‘

کیجریوال نے بتایا کہ مرکزی حکومت کی اس اسکیم پر روک کے حوالہ سے جو خط تحریر کیا گیا ہے اس میں کہا گیا ہے کہ اس منصوبہ کا نام مکھیہ منتری گھر گھر راشن نہیں رکھ سکتے۔ اس منصوبہ کو کریڈٹ لینے کے لئے لاگو نہیں کیا جا رہا، اب اس منصوبہ کا کوئی نام نہیں ہے، یہ فیصلہ آج صبح افسران کے ساتھ اجلاس میں لیا گیا ہے۔ امید ہے کہ مرکزی حکومت کا اعتراض اس سے دور ہو گیا ہوگا اور آئندہ اس منصوبہ کو لاگو کر دیا جائے گا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔