سازش: اناؤ کی بیٹی کے نام، گوہر رضا کی نظم...ویڈیو

اناؤ میں ایک لڑکی کی عصمت دری اور اسے قتل کرنے کی کوشش کے واقعہ نے ملک بھر کے ذی شعور لوگوں کو بے چین کر دیا ہے، پیش ہے اسی معاملہ پر مبنی گوہر رضا کی نظم...

قومی آوازبیورو

اناؤ میں ایک لڑکی کی عصمت دری کی گئی، اس کے اہل خانہ پر مقدمہ درج کرا دیا گیا اور آخر میں متاثرہ کو ہی جان سے مارنے کی کوشش کی، اس سب کا الزام برسر اقتدار جماعت کے ایک رسوخ دار سیاست داں پر ہے۔ اس واقعہ نے ملک بھر کے ذی شعور لوگوں کو بے چین کر دیا ہے۔ پیش ہے اسی معاملہ پر مبنی گوہر رضا کی نظم...

سازش

جب سازش، حادثہ کہلاے
اور سازش کرنے والوں کو
گدّی پے بٹھایا جانے لگے
جمہور کا ہر اک نقش قدم
ٹھوکر سے گرایا جانے لگے

جب خون سے لت پت ہاتھوں میں
اس دیش کا پرچم آجائے
اور آگ لگانے والوں کو
پھولوں سے نوازا جانے لگے

جب کمزوروں کے جسموں پر
نفرت کی سیاست رقص کرے
جب عزت لوٹنے والوں پر
خود راج سنگھاسن فخر کرے

جب جیل میں بتٹھے قاتل کو
ہر ایک سہولت حاصل ہو
اور ہر با عزت شہری کو
سولی پے چڑھایا جانے لگے

جب نفرت بھیڑ کے بھیس میں ہو
اور بھیڑ ہر اک چوراہے پر
قانون کو اپنے ہاتھ میں لے

جب منصف سہمے، سہمے ہوں
اور مانگیں بھیک حفاظت کی

ایوان سیاست میں پیہم
جب دھرم کے نعرے اٹھنے لگیں
جب مندر، مسجد، گرجا تک
ہر اک پہچان سمٹ جائے

جب لوٹنے والے چین سے ہوں
اور بستی، بستی بھوک ا گے
جب کام تو ڈھونڈھیں ہاتھ مگر
کچھ ہاتھ نہ آئے، ہاتھوں کے
اور خالی خالی ہاتھوں میں
شمشیر تھمائی جانے لگے

تب سمجھو ہر ایک گھٹنا کا
آپس میں گہرا رشتہ ہے
یہ دھرم کے نام پے سازش ہے
اور سازش بیحد گہری ہے

تب سمجھو مذہب و دھرم نہیں
تہذیب لگی ہے داؤ پر
رنگوں سے بھرے اس گلشن کی
تقدیر لگی ہے داؤ پر

اٹھو کہ حفاظت واجب ہے
تہذیب کے ہر مے خانے کی
اٹھو کہ حفاظت لازم ہے
ہر رنگ کی، ہر پیمانے کی

گوہر رضا، دہلی

(یکم اگست 2019)

Published: 4 Aug 2019, 10:10 AM