اردو کے معروف ادیب گوپی چند نارنگ کا امریکہ میں انتقال

پروفیسر نارنگ 1930 میں پاکستان اور افغانستان کی سرحد پر واقع بلوچستان کے ایک چھوٹے سے قصبے دکی میں پیدا ہوئےاور 2004 میں انہیں پدم بھوشن سے نوازا گیا۔

فائل تصویر آئی اے این ایس
فائل تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

اردو کے نامور ادیب گوپی چند نارنگ انتقال کر گئے۔ انہوں نے بدھ کو امریکہ کے شمالی کیرولینا کے شہر شارلٹ میں آخری سانس لی۔ یہ معلومات ان کے بیٹے نے دی۔91 سالہ نارنگ کے پسماندگان میں ان کی اہلیہ منورما نارنگ اور ان کے بیٹے ارون نارنگ اور ترون نارنگ اور پوتے ہیں۔ وہ 1930 میں پاکستان اور افغانستان کی سرحد پر واقع بلوچستان کے ایک چھوٹے سے قصبے دکی میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد کا نام دھرم چند نارنگ تھا جو ایک ادیب تھے۔

گوپی چند نارنگ نے اردو میں ماسٹر ڈگری حاصل کی تھی۔ انہوں نے 1958 میں پی ایچ ڈی کی۔ گوپی چند نارنگ نے دہلی کے سینٹ اسٹیفن سے اردو کی تعلیم حاصل کی۔ انہوں نے وسکونسن یونیورسٹی میں وزٹنگ آفیسر کے طور پر خدمات انجام دیں۔ 1974 میں گوپی چند نارنگ نے جامعہ ملیہ اسلامیہ یونیورسٹی میں بطور پروفیسر شمولیت اختیار کی۔ 1958 میں دہلی یونیورسٹی سے اردو ادب میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کرنے کے بعد، پروفیسر نارنگ نے سینٹ اسٹیفن کالج، دہلی میں تعلیمی عہدہ سنبھالا۔


پروفیسر نارنگ کو 2004 میں پدم بھوشن، ساہتیہ اکادمی اور 1995 میں غالب ایوارڈ سے نوازا گیا۔ انہیں پاکستان کے ستارہ امتیاز سمیت کئی اعزازات سے نوازا گیا ہے۔ پروفیسر گوپی چند نارنگ نے 57 کتابیں تصنیف کیں۔ ان میں سے زیادہ تر اردو میں ہیں۔ انہوں نے ہندی اور انگریزی میں بھی کچھ کتابیں لکھی ہیں۔ اردو کے علاوہ وہ چھ دیگر ہندوستانی زبانیں بھی جانتے ہیں۔مصنف کے علاوہ نارنگ بہت اچھے مقرر بھی ہیں۔پروفیسر نارنگ نے حالیہ برسوں میں میر تقی میر، غالب اور اردو غزلوں پر اپنی اہم تخلیقات کے انگریزی ترجمے شائع کیے ہیں۔

ممتاز ناول نگار اور مختصر کہانی کے مصنف انتظار حسین نے ایک بار کہا تھا، 'پروفیسر گوپی چند نارنگ جب پاکستان آتے ہیں تو ہندوستان کی نمائندگی ایک الگ ہی انداز میں کرتے ہیں۔ میں کسی اور کے بارے میں یہ نہیں کہہ سکتا۔ جب وہ اسٹیج پر آتے ہیں تو ہمیں لگتا ہے کہ ہندوستان ہم سے پوری طرح مخاطب ہے۔ ہندی کے ممتاز ادیب کملیشور نے اردو زبان میں پروفیسر نارنگ کی ادبی شراکت پر تحریر کیا کہ ہر ہندوستانی زبان کو ایک گوپی چند نارنگ کی ضرورت ہے۔


گیان پیٹھ ایوارڈ یافتہ افسانہ نگار قرۃ العین حیدر نے پروفیسر نارنگ کی زبردست تعریف کی ۔ شاعر گلزار نے ان کے بارے میں کہا تھا کہ 'دو پاؤں سے بہتا ہوا دریا اور ایک پاؤں پر کھڑی جھیل، جھل کی ناف پر رکھی ہوئی ہے، اردو کی روشن قندیل ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔