لکھنؤ نے پنجاب کو21 رنز سےدی شکست، دھون کے70  مینک کی آگ اگلتی گیند وں کے سامنے بے کار

لکھنؤ سپر جائنٹس نے سنسنی خیز مقابلے میں 21 رنز سے کامیابی حاصل کی۔ انہوں نے مینک کی خطرناک بولنگ کی بنیاد پر پنجاب کنگز کو شکست دی۔

<div class="paragraphs"><p>تصویر آئی اے این ایس</p></div>

تصویر آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

لکھنؤ سپر جائنٹس نے پنجاب کنگز کو 21 رنز سے شکست دی۔ لکھنؤ کے اٹل بہاری واجپئی اسٹیڈیم میں کھیلا گیا میچ بہت دلچسپ رہا۔ پہلے بلے بازی کرتے ہوئے لکھنؤ نے 200 رنز کا ہدف دیا۔ جواب میں پنجاب کی ٹیم صرف 178 رنز بنا سکی۔ لکھنؤ کی جانب سے کوئنٹن ڈی کاک نے نصف سنچری بنائی۔ اس کے بعد نکولس پران اور کرونل پانڈیا نے اہم اننگز کھیلی۔ اس کے جواب میں پنجاب کی شروعات اچھی رہی۔ لیکن اننگز کے آخری 10 اوورز میں وکٹیں مسلسل گرتی رہیں۔ اس کی وجہ سے پنجاب کو نقصان اٹھانا پڑا۔

میچ میں ایک وقت پنجاب نے 11 اوورز کے بعد کوئی وکٹ کھوئے بغیر 101 رنز بنا لیے تھے لیکن جیسے ہی ڈیبیو کرنے والے مینک یادو کا اسپیل شروع ہوا تو میچ لکھنؤ کے حق میں ہوتا دکھائی دیا۔ مینک نے جونی بیرسٹو، پربھ سمرن سنگھ اور جیتیش شرما کو بھی پویلین بھیجا۔ اسی میچ میں انہوں نے آئی پی ایل 2024 کی تیز ترین گیند بھی کی۔


لکھنؤ سپر جائنٹس کی جانب سے کے ایل راہل صرف 15 رنز بنا سکے۔ دیودت پڈیکل اس بار بھی کچھ خاص نہ کر سکے اور صرف 9 رنز بنانے کے بعد پویلین لوٹ گئے۔ اس دوران کوئنٹن ڈی کاک نے 38 گیندوں پر 54 رنز کی اننگز کھیلی۔ اس میچ میں ایل ایس جی کے کپتان نکولس پران نے طوفانی اننگز کھیلی۔ 11ویں اوور تک لکھنؤ کی ٹیم کا اسکور 95 رنز تھا، لیکن یہاں سے ٹیم کی حکمت عملی میں تبدیلی آئی۔ نکولس پران کی 21 گیندوں پر 42 رنز کی اننگز، 3 چوکوں اور 3 چھکوں سے جڑی، جبکہ کرونل پانڈیا نے 22 گیندوں میں 43 رنز کی اہم اننگز کھیلی، جس سے ایل ایس جی کا اسکور 199 رنز تک پہنچا۔ لکھنؤ نے آخری 9 اوور میں مجموعی طور پر 104 رنز بنائے تھے۔

کپتان شکھر دھون اور جونی بیرسٹو نے پنجاب کنگز کو شاندار آغاز فراہم کیا۔ بیرسٹو اور دھون کے درمیان 102 رنز کی شراکت ہوئی تاہم 12ویں اوور میں جونی بیرسٹو 29 گیندوں پر 42 رنز بنانے کے بعد پویلین لوٹ گئے۔ اس اننگز میں انہوں نے 3 چوکے اور 3 چھکے لگائے۔ بیرسٹو کے کچھ ہی دیر بعد پربھ سمرن سنگھ اور جیتیش شرما بھی پویلین لوٹ گئے لیکن شیکھر دھون ایک سرے سے مضبوطی سے کھڑے رہے۔ دھون نے 50 گیندوں میں 7 چوکوں اور 3 چھکوں کی مدد سے 70 رنز بنائے لیکن پنجاب کی جیت کو یقینی نہ بنا سکے۔


11ویں اوور کے اختتام تک پنجاب کنگز نے 101 رنز بنائے تھے اور تمام وکٹیں باقی تھیں۔ اس کے بعد مینک یادو اپنے اسپیل کا پہلا اوور پھینکنے آئے۔ ان کے آئی پی ایل کیرئیر کی پہلی ہی گیند 155 کلومیٹر فی گھنٹہ سے زیادہ کی رفتار سے آئی، اسی اوور میں انہوں نے جونی بیرسٹو کو چکمہ دے کر آؤٹ کیا۔ پربھ سمرن کافی خطرناک تال میں نظر آ رہے تھے لیکن مینک نے انہیں اپنے دوسرے اوور میں نوین الحق کے ہاتھوں کیچ کرا دیا۔ پربھ سمرن نے 19 رنز کی اپنی 7 گیندوں کی اننگز میں 1 چوکا اور 2 چھکے لگائے۔

مینک یادو لگاتار تیسرا اوور پھینکنے آئے اور اس بار انہوں نے جیتیش شرما کو آؤٹ کیا۔ انہوں نے اپنے 4 اوور کے اسپیل میں 27 رنز دے کر 3 وکٹیں حاصل کیں۔ پنجاب کو آخری 30 گیندوں پر 64 رنز درکار تھے۔ مینک کا اسپیل ختم ہونے کے بعد محسن خان نے باقی کام مکمل کر لیا۔ محسن نے پہلے شکھر دھون کو آؤٹ کیا جنہوں نے 50 گیندوں میں 70 رنز بنائے اور پھر اگلی ہی گیند پر سیم کرن کو آؤٹ کیا۔


لکھنؤ کی جیت 19ویں اوور میں ہی یقینی ہوگئی کیونکہ انہیں آخری 6 گیندوں پر 40 رنز درکار تھے۔ اگرچہ لیام لیونگسٹون نے نوین الحق کے آخری اوور میں 2 چھکے اور 1 چوکا لگایا لیکن تب تک بہت دیر ہوچکی تھی۔ اس کے ساتھ ہی لکھنؤ نے آئی پی ایل 2024 میں اپنی پہلی جیت درج کی، جس میں اس نے پنجاب کو 21 رنز سے شکست دی۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


/* */