فروری میں ٹرمپ پر مواخذے کی سماعت شروع کرنے کی قرارداد

امریکی سینیٹ (ایوان بالا) میں اقلیتی رہنما مچ میک کونیل نے فروری میں سابق صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے مواخذے کی سماعت کی قرارداد پیش کی

امریکہ کے سابق صدر ڈونالڈ ٹرمپ / Getty Images
امریکہ کے سابق صدر ڈونالڈ ٹرمپ / Getty Images
user

یو این آئی

واشنگٹن: امریکی سینیٹ (ایوان بالا) میں اقلیتی رہنما مچ میک کونیل نے فروری میں سابق صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے مواخذے کی سماعت کی قرارداد پیش کی۔

ٹرمپ پر کیپیٹل ہل پر گذشتہ ہفتے 6 جنوری کو دنگا بھڑکانے کے الزام میں امریکہ ایوان بالا میں گزشتہ ہفتہ مواخذے کی تحریک چلائی گئی تھی۔ ٹرمپ نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کیپیٹل ہل میں مظاہرین کے پہنچنے سے قبل انہوں نے جو تقریر کی تھی وہ سراسر مناسب تھی ۔ حامی کانگریس کو صدر جو بائیڈن کی انتخابی فتح کی تصدیق سے روکنے کی کوشش کر رہے تھے۔

میک کونیل نے جمعرات کو کہا کہ سابق صدر ٹرمپ کے پاس مواخذے سے متعلق 28 جنوری کو ہونے والی سماعت کے لئے سابق صدر ٹرمپ کے پاس 4 فروری کو مواخذے کا جواب دینے کے لئے اس دن سے ایک ہفتہ کا وقت ہے۔ میک کونیل کے دفتر نے جمعرات کو ایک بیان میں کہا ، "ایوان بالا کی پری ٹرائل بہت مختصر ہوگی۔

سابق صدر کے پاس ایک ہفتہ ہوگا۔ وہ 11 فروری تک پری ٹرائل کے بارے میں اپنا مختصر بیان پیش کر سکیں گے۔ مجم وعی طور پر ٹرمپ کے پاس جواب دینے کے لئے 14 دن باقی ہیں۔ ایوان اس پر دو روز میں 13 فروری تک جواب دے گا۔ انہوں نے یہ قرارداد سینیٹ کے چیف لیڈر چک شومر کو بھیجوا دی ہے۔

متعدد ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ سینیٹر لنڈسے گراہم نے ایک کانفرنس کال پر ریپبلکن ساتھیوں سے کہا کہ ٹرمپ نے جنوبی کیرولینا کے ایڈوکیٹ بٹ بوؤرز کو اپنے مواخذے کی پیروی کے لئے منتخب کیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔