آسٹریلیا کی اسکاٹ موریسن حکومت نے کورونا ٹسٹ کے لئے مزید فنڈز دینے سے کیا انکار

اسکاٹ موریسن نے پیر کے روز کہا کہ وفاقی حکومت کووڈ-19 کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اسی شرح سے اخراجات جاری رکھنے کی متحمل نہیں ہو سکتی جس شرح سے اس نے 2020 اور 2021 میں کی تھی۔

اسکاٹ موریسن، تصویر آئی اے این ایس
اسکاٹ موریسن، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کینبرا: آسٹریلیا کے وزیر اعظم اسکاٹ موریسن نے کورونا وائرس کے ٹسٹوں میں تیزی لانے کے لیے حکومتی فنڈ فراہم کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ موریسن نے پیر کے روز کہا کہ وفاقی حکومت کووڈ-19 کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے اسی شرح سے اخراجات جاری رکھنے کی متحمل نہیں ہو سکتی جس شرح سے اس نے 2020 اور 2021 میں کی تھی۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ہم نے آسٹریلیا کو اس بحران سے نکالنے کے لیے سینکڑوں بلین ڈالرز کی سرمایہ کاری کی ہے، انہوں نے کہا کہ ہم اب وبائی مرض کے اس مرحلے میں ہیں جہاں آپ ہر چیز مفت میں دستیاب نہیں کر سکتے کیونکہ جب کوئی آپ کو بتاتا ہے کہ وہ کچھ مفت بنانا چاہتے ہیں تو کوئی ہمیشہ اس کی قیمت ادا کرنے والا ہوتا ہے۔

اسکاٹ ماریسن نے کہا کہ یہ وبا دو سال سے جاری ہے۔ یہ ناقابل یقین ہے کہ حکومت نے لوگوں کو نہ جانے کو کہا، لیکن لوگوں نے تیز رفتار اینٹیجن ٹسٹ کرائے، جو دستیاب نہیں ہے اور نہ ہی قابل برداشت ہے۔‘‘ یہ بات قابل ذکر ہے کہ آسٹریلیا میں 2021 کے آخر تک 16 سال سے زیادہ عمر کی اہل آبادی میں سے 94.3 فیصد کو ویکسین کی پہلی خوراک دی جا چکی ہے، جب کہ 91.3 فیصد آبادی کو دونوں خوراکیں مل چکی ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔