تیونس کے صدر ’زین العابدین بن علی‘ کا سعودی عرب میں انتقال

تیونسی میڈیا نے غیر تیونسی ذرائع سے جمعرات کو ان کے انتقال کی خبر دی ہے اور ان کے وکیل نے فیس بُک پر اپنے صفحے پر ایک پوسٹ میں ان کی موت کی تصدیق کر دی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

قومی آوازبیورو

تیونس کے معزول صدر زین العابدین بن علی سعودی عرب میں طویل علالت کے بعد وفات پاگئے ہیں۔ تیونسی میڈیا نے غیر تیونسی ذرائع سے جمعرات کو ان کے انتقال کی خبر دی ہے اور ان کے وکیل نے فیس بُک پر اپنے صفحے پر ایک پوسٹ میں ان کی موت کی تصدیق کر دی ہے۔

زین العابدین بن علی 2011ء کے اوائل میں اپنی حکومت کے خلاف عوامی احتجاجی تحریک کے بعد تیونس سے راہ فرار اختیار کرگئے تھے اور وہ تب سے سعودی عرب کے ساحلی شہر جدہ میں مقیم تھے۔

ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ بن علی پھیپھڑوں کے سرطان میں مبتلا تھے۔ وہ 2004ء سے اس مرض کا شکار تھے۔انھیں ایک ماہ قبل حالت بگڑنے کے بعد جدہ میں ایک اسپتال میں منتقل کیا گیا تھا اور وہیں ان کا انتقال ہوا ہے۔

اس ذریعے نے العربیہ انگلش کو بتایا کہ تیونس کے سابق صدر گذشتہ تین ہفتے سے کومے کی حالت میں تھے۔مئی میں ان کی صحت کی حالت بگڑنا شروع ہوگئی تھی۔

(بشکریہ العربیہ ڈاٹ نیٹ)

    Published: 20 Sep 2019, 12:10 AM