کورونا کی وجہ سے غریب ممالک میں لاکھوں لوگ قحط کی جانب بڑھ رہےہیں

2019 میں 8 ممالک کے 24 ملین لوگ غذائی عدم تحفظ کا شکار تھے، کوروناکے بعد 17 ممالک کے40 ملین سے زائد افرادغذائی بحران کا شکار ہوگئے ہیں۔

علامتی فائل تصویر آئی اے این ایس 
علامتی فائل تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

جان لیوا اور مہلک ترین وبا کورونا وائرس ’کووڈ19‘ نے غذائی عدم تحفظ کے شکار افراد کی تعداد اور مشکلات میں مزید اضافہ کردیا ہے۔ کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے معاشی بحران سے امدادی کارروائیوں میں کمی، غریب ممالک کے لاکھوں لوگ قحط کی جانب بڑھ رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے میں ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق غذائی عدم تحفظ اور اس کے اثرات عالمی وبا سے متاثرہ خطوں میں تیزی سے بڑھ رہے ہیں، اور دنیا کے غریب ممالک میں گزشتہ سال کی نبست اس سال بے تحاشا اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 2019 میں 8 ممالک کے 24 ملین لوگ غذائی عدم تحفظ کا شکار تھے، کوروناکے بعد 17 ممالک کے40 ملین سے زائد افرادغذائی بحران کا شکار ہوگئے ہیں۔اس بات کا انکشاف ’گلوبل نیٹ ورک اگینسٹ فوڈ کرائسسس‘ کی جانب سے ہونے والی ایک تحقیق کے بعد ہوا، جس میں غذائی بحران کو مزید بدتر بنانے والے تین عوامل، تصادم و جنگیں، کووڈ -19 سے متعلقہ معاشی عوامل اور ماحولیاتی تبدیلی کو شامل کیا گیا۔

یوروپی یونین، فوڈ اینڈ ایگری کلچر آرگنائزیشن اور اقوم متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام کے اشتراک سے چلنے والے ادارے ’گلوبل نیٹ ورک اگینسٹ فوڈ کرائسسس‘ کی رپورٹ کے مطابق ہیٹی سے شام تک 55 ممالک کے 155 ملین افراد جن کا انحصارزیادہ تر فلاحی امداد پر ہیں، ان کی بطور’ بحران‘ درجہ بندی کی گئی، جس کا مطلب ہے کہ انہیں غذا کی فوری ضرورت ہے، اور ان افراد کی تعداد میں 2019 سے اب تک 20 ملین افراد کا اضافہ ہوچکاہے۔

فوڈ اینڈ ایگرکلچر آرگنائزیشن کی سینئر افسر برائے ہنگامی امداد اور بحالی اوراس مطالعے کی شریک مصنف لیوکا رسو کا کہنا ہے کہ ’ کورونا اور جنگ یہ ایک زہریلا امتزاج ہے‘ 155 ملین لوگ بحران میں ہیں اور ان میں سے 28 ملین قحط کے قریب ہیں اور آئندہ ہفتوں میں صورت حال مزید بدتر ہوسکتی ہے۔

انہوں نے عالمی برادری سے بیرونی امداد پر 97 فیصد تک انحصار کرنے والے ممالک کی زیادہ سے زیادہ مدد کر نے کی درخواست کی۔ غذائی عدم تحفظ کا شکار زیادہ تر ممالک ماضی یا حال ہی میں جنگوں یا تصادم کا نشانہ بنے ہیں جن میں جمہوریہ کانگو، افغانستان، یمن، شام اور سوڈان جیسے ممالک شامل ہیں۔

رپورٹ میں اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انٹونیو گوٹریس کا کہنا ہے کہ بھوک اور جنگ باہمی طور پر ایک دوسرے کو تقویت دیتی ہیں۔ اور ہمیں لوگوں کو قحط سے بچانے کے لیے بھوک اور جنگ سے نمٹنے کے لیے مشترکہ حل نکالنا ہوگا، جنگیں اور تصادم لوگوں کو اپنے گھروں، زمین اور ملازمتوں کو چھوڑنے کے لیے دباؤ ڈالتی ہیں۔ جس سے زراعت اور تجارت متاثر ہوتی ہے، پانی، بجلی جیسے اہم ذرائع میں کمی ہوتی ہے اور یہی چیز بھوک اور قحط کا سبب بنتی ہے۔ صرف شام میں ہی جنگ کی وجہ سے مجموعی آبادی کا 60 فیصد غذائی عدم تحفظ کا شکار ہے۔ انہوں نے دنیا کے خوشحال ممالک سے اس غذائی بحران کی جانب فی الفور توجہ دینے کی اپیل کی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔