اومیکرون ایسی کسی بھی چیز کے برعکس ہے جسے ہم نے اب تک دیکھا: امریکی ماہر

جارج واشنگٹن یونیورسٹی اسپتال میں ڈیزاسٹر میڈیکل چیف جیمس فلپس نے سی این این سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’یہ (اومیکرون) کسی بھی ایسی چیز کے برعکس ہے جسے ہم نے اب تک دیکھا ہے۔‘‘

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

کووڈ-19 کا نیا ویرئنٹ اومیکرون دنیا بھر میں بہت تیزی کے ساتھ پھیل رہا ہے۔ اس درمیان امریکہ کے ایک ڈاکٹر نے کہا ہے کہ یہ اُچھال ہماری طرف سے اب تک دیکھی گئی کسی بھی چیز کے برعکس ہے۔ جارج واشنگٹن یونیورسٹی اسپتال میں ڈیزاسٹر میڈیکل کے چیف جیمس فلپس نے سی این این سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’یہ (اومیکرون) کسی بھی چیز کے برعکس ہے جسے ہم نے ابھی تک دیکھا ہے۔ یہاں تک کہ یہ کووڈ کے گزشتہ عروج سے بھی زیادہ ہے۔‘‘

فلپس نے کہا کہ ’’ابھی ہم جو تجربہ کر رہے ہیں، وہ واشنگٹن میں ایمرجنسی محکمات کے لیے پوری طرح سے بھاری پڑ رہا ہے۔‘‘ جان ہاپکنز یونیورسٹی کے اعداد و شمار کے مطابق ملک گزشتہ ہفتہ کے مقابلے میں 300886 اوسط نئے روزانہ معاملوں کی ایک نئی وبا کا سامنا کر رہا ہے۔ سی این این کے مطابق یہ ایک ایسا منظر ہے جو پورے ملک میں چل رہا ہے، کیونکہ نیوجرسی اور نیویارک سے ارکنساس اور شیکاگو میں ریکارڈ معاملے سامنے آئے ہیں جہاں اسپتال کے بستروں کی صلاحیت بھی ایک فکر کا موضوع بن چکا ہے۔


رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ایریجونا اور نیو میکسیکو میں فیڈرل طبی اہلکاروں کو کووڈ-19 میں اضافہ کے درمیان مدد فراہم کرنے کے لیے تعینات کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق لوئسیانا کے اسپتالوں میں گزشتہ دو ہفتوں میں کووڈ-19 کے مریض تین گنا بڑھ گئے ہیں کیونکہ کووڈ معاملوں میں ایک نیا ریکارڈ دیکھا گیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔