اومیکرون بحران: کورونا کے معاملوں میں اضافہ کے سبب فضائی خدمات پر قدغن، دنیا بھر میں 11500 پروازیں منسوخ

کورونا کا دنیا بھر میں اثر پڑا ہے، پیر کے روز تقریباً 3 ہزار پروازوں کو منسوخ کیا گیا جبکہ منگل کے روز 1100 پروازوں کو منسوخ کیا گیا ہے

علامتی تصویر
علامتی تصویر
user

قومی آوازبیورو

نیو یارک: کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ اومیکرون کا پھیلاؤ وسیع تر ہوتا جا رہا ہے۔ امریکہ اور برطانیہ سمیت کئی ممالک میں اومیکرون کے خطرے درمیان کورونا کے معاملوں میں اضافہ درج کیا جا رہا ہے، لہذا حکومتیں سخت پابندیاں عائد کرنے پر مجبور ہیں۔

یورپ اور ریاستہائے متحدہ امریکہ کی کئی ریاستوں میں کورونا کے معاملے ریکارڈ سطح پر پہنچنے کے بعد پروازوں کو منسوخ کیا گیا ہے۔ یہ پروازیں ایسے وقت منسوخ ہوئی ہیں جب کرسمس کے موقع پر دنیا بھر کے سیلانی سفر پر نکلتے ہیں۔ پروازیں منسوخ ہونے سے مسافر پریشان نظر آ رہے ہیں۔


سفر کے لحاظ سے کافہ مصروف ترین ایان کے دوران جمعہ کے روز سے اب تک تقریباً 11500 پروازوں کو منسوخ کیا جا چکا ہے، جبکہ ہزاروں پروازوں کو منزل تک پہنچنے میں تاخیر ہوئی۔ کئی فضائی کمپنیوں کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کے اومیکرون ویرینٹ کے معاملوں میں تیزی کے سبب عملہ میں کمی واقع ہوئی ہے۔

پروازوں پر نظر رکھنے والی فلائٹ اویئر کے مطابق اس کا اثر دنیا بھر میں پڑا ہے۔ پیر کے روز تقریباً تین ہزار پروازوں کو منسوخ کیا گیا جبکہ منگل کے روز 1100 مزید پروازیں منسوخ ہو گئیں۔

لوگوں کو جلد کام پر لوٹنے اور وسیع پیمانے پر ’لیبر فورس‘ کی کمی کے خدشہ کو کم کرتے ہوئے یو ایس سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریونشن نے پیر کے روز غیر علامتی کورونا کے معاملوں کے لئے قرنطینہ کی مدت کو 10 دن سے کم کر کے 5 دن کر دیا۔

امریکہ میں کورونا کے معاملے جنوری میں ریکارڈ بلندی تک پہنچنے کا خدشہ ہے۔ ٹیکہ نہیں لینے والوں کی بڑی آبادی اور فوری اور آسان ٹیسٹنگ کی کمی اس خدشہ میں اضافہ کر رہی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔