فرانس: 76 مساجد کی تحقیقات کا فیصلہ، دہشت گردانہ سرگرمیوں کا شبہ!

فرانسیسی وزیر داخلہ نے ایک ٹوئٹ میں کہا ہے کہ ’’میری ہدایات کے بعد سرکای ایجنسیاں علیحدگی پسندی کے خلاف بڑے پیمانے پر اور غیر معمولی کارروائی کا آغازکریں گی۔‘‘

علامتی، تصویر آئی اے این ایس
علامتی، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

پیرس: فرانسیسی حکومت 'علیحدگی پسندی کے خلاف غیر معمولی کارروائی' کے تحت ملک میں ایسی 76 مساجد کی تحقیقات کرے گی جن پر دہشت گرد سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا شبہ ہے۔ فرانس کے وزیر داخلہ نے بدھ کوٹوئٹ کرکے کہا،’’میری ہدایات کے بعد سرکای ایجنسیاں علیحدگی پسندی کے خلاف بڑے پیمانے پر اور غیر معمولی کارروائی کا آغازکریں گی۔‘‘ اسی کڑی میں آنے والے دنوں میں ملک کی مختلف 76 مساجد کی علیحدگی پسندی کے ساتھ جڑے ہونے کے شک پر تحقیقات کی جائے گی جو بھی مسجد اس طرح کی سرگرمیوں میں ملوث پائی جائیں گی اسے بند کردیا جائے گا۔ وہیں لی فگارو اخبار کے مطابق جمعرات کو مساجد کی جانچ پڑتال کی گئی ہے اور 76 مساجد میں سے 16 وسطی اِل دی فرانس علاقے میں جبکہ دیگر دوسرے علاقوں میں واقع ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ فرانس میں کچھ عرصے سے دہشت گرد حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے اور رواں سال اکتوبر میں بھی ملک میں بہت سارے دہشت گردانہ حملے ہوئے تھے جس میں ایک استاد کی ایک شدت پسند نوجوان کے ذیعہ گلا ریت کر قتل کر دیا گیا تھا۔ اس کے بعد ملک کے نیس شہر میں ایک چرچ پر بھی حملہ ہواتھا جہاں تیونس کے ایک شہری نے تین افراد کوچاقو مار دیا تھا۔

دہشت گردانہ حملوں میں اضافے کے پیش نظر ملک کے صدر ایمانوئل میکرون نے اسلامی شدت پسندی پر لگام لگانے کے لیے تمام ضروری اقدامات اٹھانے کی بات کہی ہے جس میں ملک میں سیکورٹی میں اضافہ اور سخت گیروں کی سرگرمیوں پر نظررکھنے جیسے اقدام شامل ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next