نعمات عبد اللہ محمد: سوڈان کی تاریخ میں پہلی خاتون چیف جسٹس

سوڈان کی عبوری خود مختار کونسل کے سرکاری ترجمان محمد الکی سلیمان نے بتایا کہ چیف جسٹس کے منصب کے لیے زیر غور شخصیات میں اہل ترین ہونے کے سبب نعمات خیر کا تقرر عمل میں آیا۔

تصویر العربیہ ڈاٹ نیٹ
تصویر العربیہ ڈاٹ نیٹ

قومی آوازبیورو

سوڈان میں جمعرات کے روز جسٹس نعمات عبداللہ محمد خیر کو سرکاری طور پر ملک کی چیف جسٹس اور تاج السر علی الحبر کو ملک کا اٹارنی جنرل مقرر کر دیا گیا ہے۔ نعمات خیر سوڈان کی نئی تاریخ میں چیف جسٹس کے منصب پر فائز ہونے والی پہلی خاتون ہیں۔ سوڈان کی عبوری خود مختار کونسل کے سرکاری ترجمان محمد الکی سلیمان نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ چیف جسٹس کے منصب کے لیے زیر غور شخصیات میں اہل ترین ہونے کے سبب نعمات خیر کا تقرر عمل میں آیا۔

عمر البشیر کی حکومت کے خلاف انقلابی تحریک کے آغاز کے بعد سے خواتین کا ملک کی سیاسی تاریخ میں غیر معمولی نوعیت کا کردار سامنے آیا۔ انقلابی تحریک کو سپورٹ کرنے والی خواتین میں جسٹس نعمات بھی شریک تھیں۔ وہ رواں سال اپریل میں خرطوم میں سوڈانی فوج کے ہیڈ کوارٹر کے سامنے منعقد ہونے والے دھرنے میں نظر آئی تھیں۔ نعمات خیر نے تین جون کو دھرنے کو منتشر کرنے کے لیے ہونے والی خون ریز کارروائی پر تبصرہ کرتے ہوئے فیس بک پر اپنی پوسٹ میں لکھا کہ وہ اس بات کی متمنی ہیں کہ اللہ تعالی ان فورسز سے انتقام لے جن پر دھرنے کے میدان میں نہتے نوجوانوں کو قتل کرنے کا الزام ہے۔

سوڈان کے عبوری وزیراعظم عبداللہ حمدوک نے عبوری کابینہ کی تشکیل میں چار خواتین وزراء کا اعلان کیا۔ ان میں ملک کی پہلی خاتون وزیر خارجہ کے علاوہ ہائر ایجوکیشن کی وزیر، محنت اور سماجی بہبود کی وزیر اور نوجوانوں اور کھیلوں کے امور کی وزیر شامل ہیں۔ اس سے قبل خود مختار کونسل میں بھی دو خواتین کو نمائندگی دی گئی تھی۔

نعمات خیر 1957 میں پیدا ہوئیں۔ انہوں نے خرطوم میں قاہرہ یونیورسٹی کے کیمپس سے قانون کی تعلیم حاصل کی۔ نعمات نے 1983 میں عدلیہ کی معاون کے طور پر کام شروع کیا۔ بعد ازاں وہ کئی برس تک فوجداری، شہری اور دیگر نوعیت کی عدالتوں میں منتقل ہوتی رہیں۔ اس کے بعد انہیں ترقی پانے کا موقع ملا اور وہ پہلے سیکنڈ گریڈ اور پھر فرسٹ گریڈ کی جج بن گئیں۔ نعمات 2003 میں اپیل کورٹ کی جج مقرر کی گئیں۔ سال 2015 میں نعمات ترقی پا کر سپریم کورٹ کی جسٹس بنا دی گئیں۔

سوڈان میں دسمبر کے انقلاب کی قیادت کرنے والی اپوزیشن جماعت فریڈم اینڈ چینج فورسز کے ایک رہ نما ایڈوکیٹ احمد محمود نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ "نعمات خیر عدلیہ ، بنیادی قانونی اصلاحات اور عدلیہ کے اداروں کو درست کرنے سے متعلق فریڈم اینڈ چینج فورسز پارٹی کے پروگرام کو لے کر چلیں گی"۔

ایڈوکیٹ احمد محمود کے مطابق نعمات خیر کا تقرر عارضی نوعیت کا ہو گا۔ اس لیے کہ چیف جسٹس کے تقرر کا اصل طریقہ یہ ہے کہ وہ قانون ساز کونسل کی منظوری سے سپریم جوڈیشل کونسل کے ذریعے عمل میں آتا ہے۔ قانون ساز کونسل کی تشکیل آئندہ چند ماہ میں متوقع ہے۔

سوڈان کے ایک جسٹس عبدالالہ زمراوی نے فیس بک پر اپنے تبصرے میں کہا ہے کہ نعمات خیر اپنے ضمیر کے مطابق فیصلے کرتی ہیں جو کہ ایک پیشہ ور جج کا ضمیر ہے .. کنداکہ کے علاقے کی خواتین کے لیے یہ ایک اعزاز ہے کہ نعمات خیر سوڈان کی تاریخ میں پہلی خاتون چیف جسٹس بنیں۔

(بشکریہ العربیہ ڈاٹ نیٹ)

Published: 11 Oct 2019, 4:10 PM