اومیکرون 2 ہفتوں میں 38 ممالک میں پھیل چکا، ابھی تک کوئی موت نہیں ہوئی: عالمی ادارہ صحت

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے جمعہ کے روز بتایا کہ اومیکرون 38 ممالک میں پھیل چکا ہے، تاہم کورونا کی اس نئی قسم سے اب تک کسی موت کی اطلاع نہیں ہے

عالمی ادارہ صحت / آئی اے این ایس
عالمی ادارہ صحت / آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

جنیوا: جنوبی افریقہ میں پائے جانے والا کورونا کا نیا ویرینٹ اومیکرون دنیا کے دوسرے ممالک میں بھی تیزی سے پھیل رہا ہے۔ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے جمعہ کے روز بتایا کہ اومیکرون 38 ممالک میں پھیل چکا ہے، تاہم کورونا کی اس نئی قسم سے اب تک کسی موت کی اطلاع نہیں ہے۔ غورطلب ہے کہ اس ویرینٹ کا سب سے پہلا معاملہ جنوبی افریقہ میں دو ہفتے قبل رپورٹ کیا گیا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کا کہنا ہے کہ اس بات کا پتا لگانے میں کئی ہفتے لگیں گے کہ اومیکرون کتنا متعدی ہے، کیا یہ سنگین بیماری کا سبب بنتا ہے اور علاج اور ٹیکے اس کے خلاف کتنے کارگر ہیں۔ ڈبلیو ایچ او نے انتباہ دیا ہے کہ یہ اگلے کچھ ہفتوں میں یورپ کے نصف سے زیادہ کورونا کے معاملوں کو سبب بن سکتا ہے۔


ڈبلیو ایچ او کے ہنگامی امور کے ڈائریکٹر مائیکل ریان نے کہا، "ہمیں ان سبھی جوابات کے ملنے کا انتظار ہے جن کی ہمیں تلاش ہے۔ فی الحال ہمیں سائنس پر بھروسہ کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں صبر کرنا چاہیے اور خوفزدہ نہیں ہونا چاہیے۔”

وہیں عالمی ادارہ صحت کی کورونا پر تحقیق کی سربراہ وان کرخوف نے کہا ہے کہ معاملوں میں وائرس کی متنقلی میں اضافہ ہو رہا ہے لیکن واضح تصویر حاصل کرنے میں مزید کچھ دن لگیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جہاں تک شدت کا تعلق ہے، ابتدائی رپورٹیں یونیورسٹی کے طلبا کے ایک گروپ سے آئی ہیں اور کم عمر افراد میں ہلکی بیماری کا رجحان ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اومیکرون کے اب تک پائے جانے والے کیسز سنگین نہیں ہیں اور تمام متاثرین نے سفر کیا تھا، نیز جو لوگ بیمار ہیں وہ فضائی سفر نہیں کر رہے ہیں، لہذا ومیکرون کی شدت کے بارے میں کوئی نتیجہ اخذ کرنا جلد بازی ہوگی۔ ویکسین پر بات کرتے ہوئے ڈبلیو ایچ او نے کہا کہ موجودہ ویکسین پر شک کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔