معروف فُٹ بالر محمد صلاح نے اِسلام سے متنفر انگریز کو مسلمان کر دیا

برطانوی نو مسلم کا کہنا تھا میں نے یونیورسٹی میں مصر کے متعدد طلباء سے ملاقات کی۔ جب انہیں پتا چلا کہ میں محمد صلاح میں گہری دلچسپی لیتا ہوں تو وہ مجھے سے گھنٹوں محمد صلاح کی باتیں کرتے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

قومی آوازبیورو

لیورپول اسٹار اور مصری فٹ بالر محمد صلاح سے متاثر ہو کرایک انگریز جو اسلام اور مسلمانوں سے سخت نفرت کرتا تھا مشرف بہ اسلام ہوگیا ہے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کےمطابق دائرہ اسلام میں داخل ہونے والے گورے کا کہنا ہے کہ اسے اسلام سے شدید نفرت تھی مگر جب لیور پول کے فٹ بالر محمد صلاح نے اسلام کا صیح امیج پیش کیا تو وہ اسلامی تعلیمات سے بہت متاثر ہوا جس کے بعد اس نے اسلام قبول کرنے اور مسلمان ہونے کا فیصلہ کیا۔

جمعرات کے روز 'دی گارڈین' اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے نو مسلم بین برڈ نے کہا کہ وہ لیورپول اسٹرائیکر محمد صلاح کی وجہ سے اسلامو فوبیا کا راستہ چھوڑ کر مسلمان ہونے کی طرف راغب ہوا۔ اس نے کہا کہ محمد صلاح ہی میری 'انسپائریشن' ہے جن کی شخصیت نے واقعتاً مجھے متاثر کیا۔ اب میری خواہش ہے کہ میں محمد صلاح سے ملاقات کروں اور اس کے ساتھ مصافحہ کرکے اس کو بتاؤں کہ میں اس کی وجہ سے مشرف بہ اسلام ہوگیا ہوں۔ ساتھ ہی اس کا شکریہ ادا کروں۔

معروف فُٹ بالر محمد صلاح نے اِسلام سے متنفر انگریز کو مسلمان کر دیا

گورے نو ممسلم کا کہنا ہے کہ محمد صلاح پہلا مسلمان فٹ بالر تھا جس کی پیروی کرنے کی میری خواہش تھی۔ میں جانتا تھا کہ وہ اپنی زندگی کیسے گزارتا ہے۔ وہ لوگوں کے ساتھ بات چیت کا طریقہ جانتا ہے۔ جب اس نے لیورپول کے ایک پرستار کے ساتھ تصویر کھینچی جس کا تعاقب کرنے کے دوران اس کی ناک ٹوٹی تھی اس واقعے نے مجھے متاثر کیا۔ بین برڈ نے مزید کہا کہ جب محمد صلاح چیمپینز لیگ جیت گئے۔ میں نے اپنے دوست سے کہا کہ یہ اسلام اور مسلمان کی فتح ہے۔ وہ ایک بہترین کھلاڑی ہے جو اپنی فٹ بال برادری، سیاست اور مذہب کا احترام کرتا ہے۔

بین برڈ نے بتایا کہ جب میں اسکول میں تھا مجھے مسلمانوں کے ساتھ نفرت تھی۔ لیڈز یونیورسٹی میں اپنی تعلیم میں تبدیلی لانے اور مشرق وسطی کے مطالعے میں مہارت حاصل کرنے سے پہلے انھیں اس بارے میں غلط نظریہ تھا مگر جب تحقیق کی تو میں مختلف نتیجے پر پہنچا۔

برطانوی نو مسلم کا کہنا تھا میں نے یونیورسٹی میں مصر کے متعدد طلباء سے ملاقات کی۔ جب انہیں پتا چلا کہ میں محمد صلاح میں گہری دلچسپی لیتا ہوں تو وہ مجھے سے گھنٹوں محمد صلاح کی باتیں کرتے۔ یہ اس نے مصری طلباٰء کے لیے کیا کچھ کیا۔ میں محمد صلاح کو سمجھنے کے ساتھ ساتھ اسلام کو سمجھتا گیا۔

اس کا کہنا ہے کہ جب لوگ قرآن کے بارے میں پڑھتے ہیں تو مختلف سوچ رکھتے ہیں۔ میڈیا میں اسلام کی اصل تصویر پیش نہیں کی جاتی۔ دیکھتے ہیں جس کا ہمیشہ میڈیا میں نقشہ نہیں پیش کیا جاتا ہے۔ میں مسلم کمیونٹی میں نیا ہوں اور میں اب بھی سیکھ رہا ہوں۔ مجھے نہیں لگتا کہ میرے ساتھی سوچتے ہیں کہ میں مسلمان ہوں کیونکہ میں واقعی میں تبدیل نہیں ہوا۔ مجھے لگتا ہے کہ میرا دل مطمئن ہے۔

Published: 4 Oct 2019, 10:10 AM