عالمی شہرت یافتہ فرانسیسی فیشن ڈیزائنر پیئر کارداں(Pierre Cardin)انتقال کر گئے

عالمی شہرت یافتہ فرانسیسی فیشن ڈیزائنر اور ارب پتی بزنس مین پیئر کارداں اٹھانوے برس کی عمر میں پیرس کے نواح میں انتقال کر گئے۔

عالمی شہرت یافتہ فرانسیسی فیشن ڈیزائنر پیئر کارداں انتقال کر گئے
عالمی شہرت یافتہ فرانسیسی فیشن ڈیزائنر پیئر کارداں انتقال کر گئے
user

ڈی. ڈبلیو

کارداں کے اہل خانہ کے مطابق ان کا انتقال آج منگل 29 دسمبر کے روز فرانسیسی دارالحکومت پیرس کے نواح میں ایک ہسپتال میں ہوا۔ پئیر کارداں دو جولائی 1922ء کو اٹلی میں تریویزو کے علاقے میں پیدا ہوئے تھے اور ان کے والدین نے ان کا نام پیئترو کونستانت کاردین رکھا تھا۔

فیوچرسٹک فیشن کے بانیوں میں سے ایک

کارداں نے اپنے فیشن ہاؤس کی بنیاد 1950 میں رکھی تھی، جسے بعد کے عشروں میں اتنی ترقی ملی تھی کہ انہوں نے دنیا بھر میں اپنی کمپنی کی شاخوں اور فیشن ہاؤسز کی ایک پوری سلطنت کھڑی کر دی۔ ان کا شمار پاکو رابان اور آندرے کوریگس کے ساتھ ان شخصیات میں ہوتا ہے، جنہوں نے 1963ء میں فیوچرسٹک فیشن رجحانات کی بنیاد رکھی تھی۔

پیئر کارداں کے والد زرعی پس منظر کے حامل اور وائن کے ایک تاجر تھے اور وہ اپنے والدین کے سات بچوں میں سے سب سے چھوٹے تھے۔ پیئر کارداں کا خاندان اس دور کے فاشسٹ حکمرانوں سے بچنے کے لیے 1924ء میں اٹلی سے ترک وطن کے کر فرانس میں آباد ہو گیا تھا۔

دوسری عالمی جنگ کے دوران 1944ء میں جب نازیوں کے زیر قبضہ فرانس کو آزاد کرا لیا گیا تھا، تو انہوں نے پیرس میں فیشن ڈیزائنر کے طور پر کام کرنا شروع کر دیا۔

ان کی ایک ڈیزائنر کے طور پر شہرت کا آغاز 1947ء میں اس وقت ہوا تھا، جب انہون نے ایک اور بین الاقوامی شہرت یافتہ فرانسیسی فیشن ڈیزائنر کرستیاں دِیئور کے لیے کام کرتے ہوئے خواتین کے لیے 'نیو لُک‘ ملبوسات ڈایزائن کیے تھے۔

غیر معمولی حد تک کامیاب کاروباری شخصیت

پیئر کارداں نے اپنے جس کیریئر کا آغاز فیشن ڈیزائنر کے طور پر کیا تھا، اس کے نقطہ عروج پر وہ کئی شعبوں میں صارفین کے لیے بہت مہنگی اشیائے صرف اور اشیائے تعیش بنانے لگے۔ انہوں نے اپنی کاروباری زندگی میں بہت سی املاک خریدیں، جن میں انتہائی مہنگے ہوٹل، ریستوراں، میڈیا ادارے، محلات اور بحری جہاز تک شامل تھے۔

2007ء میں وہ 180 ممالک میں 800 کاروباری اداروں کے مالک تھے اور تب ان کے بزنس گروپ کے لیے کام کرنے والے کارکنوں کی تعداد تقریباﹰ دو لاکھ بنتی تھی۔ وہ 850 سے زائد مصنوعات کے پیداواری لائسنسوں اور ان کے حقوق دانش کے مالک بھی تھے۔

پیئر کارداں 1991ء سے اقوام متحدہ کے ثقافتی ادارے یونیسکو کے خیر سگالی کے سفیر بھی تھے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next