تھوک کے استعمال پر پابندی کے معاملے پر کرکٹ دنیا منقسم

کورونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر بالروں کے گیند پر تھوک کے استعمال پر پابندی عائد کردی تھی تاہم گیند پر پسینے کے استعمال کی اجازت دی تھی۔

سوشل میڈیا
سوشل میڈیا
user

یو این آئی

کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے اثر اور تباہی کے درمیان بین الاقوامی کرکٹ کو دوبارہ پٹری پر لانے کی تیاریاں جاری ہیں لیکن گیند پر تھوک کے استعمال پر پابندی کے سبب کرکٹ دو حصوں میں تقسیم ہوگئی ہے۔

ہندوستان کے سابق کپتان اور سابق لیگ اسپنر انل کمبلے کی زیر قیادت انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی تکنیکی کمیٹی نے کورونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر بالروں کے گیند پر تھوک کے استعمال پر پابندی عائد کردی تھی۔ تاہم کمیٹی نے گیند پر پسینے کے استعمال کی اجازت دی تھی۔

دنیا کے سابق اور موجودہ بالرز تھوک پر پابندی کے بارے میں مختلف رائے رکھتے ہیں۔جن ممالک میں جہاں کھلاڑیوں نے تربیت شروع کردی ہے وہاں بولرز کو تھوک کے استعمال سے روک دیا گیا ہے۔ زیادہ تر فاسٹ بالرز کا خیال ہے کہ اس سے تیز بالرز کے ہاتھوں سے سوئنگ اور ریورس سوئنگ جیسے ہتھیار ختم ہوجائیں گے۔

کمبلے کا کہنا ہے کہ گیند پر تھوک کے استعمال سے کورونا وائرس پھیلنے کا زیادہ امکان رہتا ہے اور اس کے پیش نظر طویل بحث و مباحثے کے بعد اس پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا گیا۔ کمبلے نے تھوک پر پابندی کو ایک عبوری اقدام قرار دیا۔

49 سالہ کمبلے نے کہا کہ طبی مشوروں کی بنیاد پر ہم سمجھتے ہیں کہ گیند پر تھوک کے استعمال سے وائرس پھیلنے کا زیادہ امکان ہے ، لہذا ہم نے اس کے استعمال پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا۔ تاہم کھلاڑیوں کے لئے یہ کرنا مشکل کام ہوگا کیونکہ انہیں یہ کیریئر کے آغاز ہی سے ہی عادت میں شمار ہو گئی ہے۔

ہندوستانی ٹیم کے ٹاپ پیسر جسپریت بمراہ کا کہنا ہے کہ گیند کو چمکانے اور چمک برقرار رکھنے کے لئے بولرز کو دوسرا آپشن چاہئے۔ بمراہ نے کہا کہ صرف ایک چیز جو مجھے متاثر کرتی ہے وہ تھوک ہے۔ میں نہیں جانتا کہ جب ہم میدان میں واپس جائیں گے تو ہمیں کون سے رہنما اصولوں پر عمل کرنا پڑے گا لیکن مجھے یقین ہے کہ تھوک کے علاوہ کوئی دوسرا آپشن ہونا چاہئے۔ اگر گیند اچھی طرح سے چمک نہیں رہی ہے تو بالرز کے لئے بہت پریشانی ہوگی۔

بمراہ نے کہا کہ گراؤنڈز چھوٹے ہوتے جارہے ہیں اور پچ فلیٹ ہو رہی ہے لہذا ہمیں کسی چیز کی ضرورت ہے۔ بالرز کے لئے ایک آپشن ہونا چاہئے تاکہ وہ گیند کی چمک برقرار رکھ سکیں تاکہ گیند ریورس یا روایتی سوئنگ کر سکے۔

ہندستان کے تجربہ کار آف اسپنر روی چندرن اشون کا خیال ہے کہ گیند پر تھوک استعمال کرنے کی عادت سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے بولروں کو پریکٹس کرنا ہوگی۔ اشون نے کہا کہ بالر کی حیثیت سے میرے لئے گیند پر تھوک ایک فطری عمل ہے اور اس سے بچنے کے لئے مجھے پریکٹس کرنا ہوگی تاکہ اپنی اس عادت سے نجات مل سکے۔

سابق آسٹریلیائی فاسٹ بولر بریٹ لی کا کہنا ہے کہ کیریئر کے آغاز سے ہی کھلاڑی گیند پر تھوک کا استعمال کرتے ہیں اور کسی بھی کھلاڑی کے لئے راتوں رات اسے استعمال کرنے کی عادت چھوڑنا مشکل ہوجائے گا۔ انہوں نے کہا کہ جب آپ آٹھ نو سال کی عمر سے گیند پر تھوک کا استعمال کر رہے ہوں تو راتوں رات اس عادت کو چھوڑنا بہت مشکل ہوگا۔

لی کو امید ہے کہ اگر اس اصول کی خلاف ورزی ہوئی تو آئی سی سی اس میں نرمی لائے گی جیسے اس اصول کی خلاف ورزی ہوئی تو انتباہ دیا جائے گا۔ یہ ایک اچھا قدم ہے لیکن مجھے لگتا ہے کہ اس اصول کو نافذ کرنا مشکل ہوگا کیونکہ کھلاڑیوں نے ہمیشہ اسے استعمال کیا ہے۔

سابق افریقی کپتان فاف ڈو پلیسیس بھی لی سے متفق ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ اس اصول سے فیلڈرز کو بھی مشکل پیش آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ فیلڈرز کے لئے بھی اس کی پیروی کرنا مشکل ہوگا۔ جیسا کہ لی نے کہا کہ مجھے بھی سلپ میں گیند کو پکڑنے سے پہلے ہاتھوں پر تھوکنے کی عادت ہے کیونکہ اس سے کیچ پکڑنا آسان ہوجاتا ہے۔ اگر آپ رکی پونٹنگ جیسے کھلاڑیوں کو دیکھیں تو وہ اکثر اپنے ہاتھوں میں تھوک لگاتے تھے ۔

آسٹریلیائی فاسٹ بالر مچل اسٹارک کا کہنا ہے کہ تھوک پر پابندی سے کرکٹ کی 'چمک' ختم ہونے کا امکان بڑھ سکتا ہے۔ اسٹارک نے کہا کہ ہم اپنی اہمیت کھونے اور بلے بازوں سے کمزور نہیں ہونا چاہتے ہیں۔ اس معاملے میں کچھ کرنے کی ضرورت ہے تاکہ ہم گیند کو سوئنگ کرسکیں۔ اگر وہ گیند پر تھوک پر پابندی عائد کرتے ہیں تو گیند اور بلے کے مابین سنسنی کم ہوجائے گی۔ لوگوں کو کرکٹ دیکھنے میں دلچسپی کم ہوگی اور بچے بولر نہیں بننا چاہیں گے۔

تھوک پر پابندی کے کرکٹ کمیٹی کے فیصلے کے بعد یہ سوالات اٹھائے گئے کہ کمیٹی نے تھوک کے متبادل کے بارے میں کیوں نہیں سوچا۔ تھوک کی جگہ مصنوعی مادے کا بھی استعمال کیا جاسکتا تھا۔ اس پر کمبلے نے کہا کہ ہم نے اس پر تبادلہ خیال کیا لیکن اگر آپ کھیل کی تاریخ پر نظر ڈالیں تو ہم بہت تنقید کا شکار رہے ہیں اور ہم بیرونی مادوں کو کھیل میں آنے سے روکنے پر توجہ مرکوز کر رہے ہیں۔

کمبلے نے کہا کہ اگر آپ واقعی اس کو قانونی حیثیت دینے جا رہے ہیں تو آپ کو آگاہ ہونا چاہئے کہ اس کا برسوں پہلے گہرا اثر پڑا ہے۔ آئی سی سی نے فیصلہ لیا لیکن اس کے بعد کرکٹ آسٹریلیا نے اس سیریز کے دوران جنوبی افریقہ اور آسٹریلیا کے مابین بال ٹیمپرنگ کے ساتھ جو کچھ بھی ہوا اس پر زیادہ سخت موقف اختیار کیا لہذا ہم نے اس پر غور کیا۔ لیکن یہ صرف ایک عبوری قدم ہے اور مجھے امید ہے کہ کورونا کے چند مہینوں یا ایک سال بعد چیزیں بدلیں گی اور چیزیں معمول پر آجائیں گی۔

جنوبی افریقہ کے سابق فاسٹ بالر شان پولاک کا کہنا ہے کہ اگر کرکٹ کو محفوظ ماحول میں منعقد کیا گیا ہے تو پھر گیندبازوں کے گیند پر تھوک کے استعمال میں کوئی حرج نہیں ہونا چاہئے۔ پولاک سے قبل ویسٹ انڈیز کے سابق فاسٹ بولر مائیکل ہولڈنگ نے بھی کہا تھا کہ اگر میچ محفوظ ماحول میں ہوتے تو گیند پر تھوک پر پابندی کا کوئی معنی نہیں ہوتا۔ سری لنکا کے سابق کپتان کمار سنگاکارا کا کہنا ہے کہ کورونا کے بعد ایک بار جب کرکٹ دوبارہ شروع ہو تو یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ کھلاڑی آئی سی سی کی نئی ہدایات پر کیسے عمل کر پائیں گے۔

سنگاکارا نے کہا کہ فاسٹ بولر ہو یا اسپنر اس نے اپنے بچپن سے ہی گیند کو چمکانے کے لئے تھوک کا استعمال کیا ہے۔ کرکٹ ایک ایسا سماجی کھیل ہے جہاں آپ زیادہ تر وقت ڈریسنگ روم میں گزارتے ہیں۔ آپ ایک دوسرے سے بات کرتے ہیں۔ یہ ایک بہت عام چیز ہے۔ آپ کھیلنے کے لئے تیار ہیں وارم اپ نہیں کرتے ہیں۔ آپ سب کام کرتے ہیں اور گھر چلے جاتے ہیں۔ یہ دیکھنا دلچسپ ہوگا کہ کھلاڑی ان تمام چیزوں پر کس طرح قابو پاتے ہیں۔

کرکٹ آسٹریلیا (سی اے) نے کہا ہے کہ میچ کے دوران بال ٹرانزیشن فری رکھنا بھی ایک آپشن ہوسکتا ہے۔ کرکٹ آسٹریلیا کے اسپورٹس سائنس اور میڈیسن منیجر الیکس کونٹوریس کا کہنا ہے کہ گیند کو جراثیم سے پاک رکھنا بھی ایک آپشن ہوسکتا ہے۔ کونٹورس نے کہا کہ یہ ایک ایسی عادت ہے جس کو ترک کرنا مشکل ہوگا۔ جو کھلاڑی برسوں سے یہ کام کر رہے ہیں ان کے لئے اس عادت سے نجات پانا آسان نہیں ہوگا۔ کچھ کھلاڑیوں کو یہ عادت ہوتی ہے کہ وہ انگلی میں تھوک سے اپنے ہاتھوں میں لیتے ہوئے گیند کو چمکاتے ہیں ۔ ہمیں امید ہے کہ عادت چھوڑنے کے لئے عملی طور پر وقت ملے گا لیکن بعض اوقات غلطیاں ہوسکتی ہیں۔

سابق آسٹریلوی دھماکہ خیز اوپنر میتھیو ہیڈن نے تھوک کے استعمال اور پسینے کی اجازت پر پابندی عائد کرنے کے فیصلے کوعجیب قرار دیا۔ ہیڈن نے کہا کہ میرے خیال میں تھوک پر پابندی لگانے اور پسینے کے استعمال کی اجازت دینے کا آئی سی سی کا فیصلہ حیرت انگیز ہے۔ یہ چیزیں کرکٹ کا ایک اہم حصہ ہیں اور میں نہیں جانتا کہ اسے کس طرح بدلا جاسکتا ہے۔ بہترین بات یہ ہوگی کہ بالرز کورونا ٹیسٹ کروائیں اور نتیجہ منفی ہونے پر انہیں کھیلنے کی اجازت دیں۔ اگر بالر میں کورونا نہیں ہے تو پھر آئی سی سی کو دونوں تھوک اور پسینے کی اجازت دی جانی چاہئے۔