ہندوتوا، فسطائیت اور یہودیت

اسرائیل کو ایک ایسے دوست کی حمایت حاصل ہے جس نے ہٹلر کے حراستی کیمپوں میں یہودیوں کے غیر انسانی قتل کی تعریف کی تھی

<div class="paragraphs"><p>تصویر سوشل میڈیا</p></div>

تصویر سوشل میڈیا

user

شبھم شرما

ہندوتوا اور صیہونیت دونوں کی سب سے بڑی خصوصیت یہ ہے کہ انہوں نے مذہب کی اس حد تک سیاست کی ہے کہ یہ یہودیت اور ہندومت کے معاملے میں اب ایک عام سی بات بن گئی ہے۔ اس کا افسوسناک نتیجہ یہ ہے کہ ہندوتوا کی مخالفت کو یہود دشمنی اور صیہونیت کی مخالفت کو ہندو فوبیا مان لیا جاتا ہے۔

دیکھنے کے لیے بہت سی یہودی شخصیات ہیں۔ البرٹ آئنسٹائن نے صیہونیت کی مخالفت کی اور اسرائیل کا صدر بننے کی پیشکش ٹھکرا دی۔ انہوں نے کہا، ’’میرے دل کو (اسرائیلی) ریاست کا خیال پسند نہیں آتا۔ میں سمجھ نہیں پا رہا کہ اس کی ضرورت کیوں ہے۔ یہ بہت سی مشکلات اور تنگ ذہنیت کا معاملہ ہے۔ میرے خیال میں یہ ایک برا خیال ہے۔‘‘ عظیم ماہر لسانیات نوم چومسکی تاحیات صیہونیت کے مخالف رہے ہیں۔ آسٹریا کے ماہر نفسیات اور فلسفی سگمنڈ فرائیڈ اس کے خلاف تھے۔ کیمیا دان، مصنف اور ہولوکاسٹ سے بچ جانے والے پرائمو لیوی بھی صیہونیت کے سخت مخالف تھے۔ ان کا یہ خیال کہ ’’ہر کسی کے اپنے 'یہودی‘ ہیں، اسرائیلیوں کے معاملے میں وہ فلسطینی ہیں۔‘‘

ہندوتوا اور ہندو قوم کے تصور کی مخالفت کرنے والے عظیم ہندوستانیوں کی فہرست میں وہ تمام لوگ شامل ہیں جنہوں نے اپنی جانیں قربان کیں اور انگریزوں کے ہاتھوں قید و بند کی صعوبتیں برداشت کیں۔ اس میں قدرتی طور پر آر ایس ایس، ہندو مہاسبھا اور ان کے حواریوں کو شامل نہیں کیا گیا جو انگریزوں کے خلاف شاذ و نادر ہی لڑے تھے۔ اس کی بہترین مثال یہ ہے کہ آر ایس ایس نے اپنا پہلا (سیاسی) ماہانہ ’راشٹردھرم‘ اگست 1947 کے اواخر میں شروع کیا جب اسے برطانوی سنسر شپ یا برطانوی وہپ دونوں کا کوئی خوف نہیں تھا۔

استعمار مخالف جدوجہد کے دوران ہندوتوا طاقتیں حاشیہ پر رہیں۔ وہ جانتے تھے کہ قوم پرست ہونے کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی۔ تاہم اس عرصے میں انہوں نے اپنے نظریاتی دانت بھی تیز کر لیے۔ وی ڈی ساورکر، کے بی ہیڈگیوار، ایم ایس گولوالکر اور بی ایس مونجے نے ہندو قوم کا نظریہ پیش کیا۔ ان کے بقول اسے بیدار کرنا اور اسے مسلمانوں اور عیسائیوں جیسی مذہبی اقلیتوں کے خون سے سیراب کرنا ضروری تھا۔ ہندوتوا قوتوں نے قومی ریاست کے نظریے کے مرکز میں ایک یکساں نسلی یا مذہبی طبقہ دیکھا، جو جدوجہد آزادی کے رہنماؤں کے تصور کردہ تکثیری، کثیر مذہبی، کثیر ثقافتی اور فلاحی ریاست کے بالکل برعکس تھا۔ یہی خواہش اسے فاشزم یعنی فسطائیت کے دروازے تک لے گئی۔


بی ایس مونجے نے1931 میں بینیٹو مسولینی سے ملنے کے لیے اٹلی کا سفر کیا۔ انہوں نے دیکھا کہ کس طرح نوجوان لڑکوں اور لڑکیوں کی ہفتہ وار 'شاکھا' لگائی جاتی ہے، جس میں انہیں جسمانی مشقیں اور نیم فوجی مشقیں کرائی جاتی تھیں۔ یہ بعد میں آر ایس ایس کے طریقہ کار کا حصہ بن گیا۔ مونجے نے اپنی ڈائری میں لکھا، ’’(فسطائی) اداروں اور پوری تنظیم کے تصور نے مجھے سب سے زیادہ متوجہ کیا۔ فاشزم کا خیال واضح طور پر لوگوں میں اتحاد کا تصور سامنے لاتا ہے۔ ہندوستان اور خاص طور پر 'ہندو انڈیا' کو ایسی تنظیم کی ضرورت ہے تاکہ ہندو 'فوجی اوتار' میں ڈھل سکیں۔ ڈاکٹر ہیڈگیوار کی قیادت میں آر ایس ایس ہماری ایسی ہی تنظیم ہے۔‘‘ یورپ سے واپسی کے تین سال کے اندر مونجے نے بھونسلے ملٹری اسکول کے ساتھ سینٹرل ہندو ملٹری ایجوکیشن سوسائٹی پر کام شروع کر دیا۔ اس کا مقصد ہندوؤں کو مادر وطن کی حفاظت کی مکمل ذمہ داری لینے کے لیے تیار کرنا تھا۔

مسولینی کے ساتھ مونجے کی ملاقات کا ایک اہم پہلو یہ تھا کہ جب مونجے سے برطانوی اور ہندوستانی رہنماؤں کے درمیان مسائل کے حل کے لیے گول میز کانفرنس کے امکانات کے بارے میں پوچھا گیا تو مونجے نے جواب دیا، ’’میں نے صرف یہ کہا ہے کہ اگر انگریز ہمیں دوسری ڈومنین ریاستوں جیسا درجہ دینے کے لیے ایماندار ہیں تو ہمیں برطانوی سامراج کے اندر وفاداری کے ساتھ رہنے میں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ اگر ہندوستان برطانیہ کے ساتھ دوستانہ تعلقات برقرار رکھتا ہے، تو برطانیہ یورپ میں اپنا اہم مقام برقرار رکھ سکے گا۔‘‘ اس طرح دائیں بازو کے ہندوتوا حامیوں کا استعماری موقف واضح طور پر نظر آتا ہے۔ یہ بھی یاد رہے کہ مونجے اور مسولینی کی ملاقات سے قبل انڈین نیشنل کانگریس نے 1930 میں اپنے لاہور اجلاس میں 'مکمل سوراج' کی قرارداد پاس کی تھی جس کی وجہ سے وہ سمجھوتے کے لیے بالکل تیار نہیں تھی جب کہ مونجے ان کوششوں میں مصروف تھے کہ برطانوی راج کا سورج کبھی غروب نہ ہو!

سال 1938 تک وی ڈی ساورکر کی سربراہی والی ہندو مہاسبھا کے لیے نازی جرمنی اہم حوالہ بن گیا تھا۔ ساورکر نے یکم اگست 1938 کو پونا میں 20000 لوگوں کی ایک بڑی ریلی سے خطاب کیا جس میں انہوں نے کہا، ’’جرمنی کو نازی ازم اور اٹلی کو فاشزم کا سہارا لینے کا پورا حق ہے اور واقعات نے ظاہر کیا ہے کہ موجودہ حالات میں یہ نظریات اور اصول ضروری ہیں۔ جب کانگریس، خاص طور پر جواہر لال نہرو نے جرمنی کی اس وقت کی وحشت پر تشویش کا اظہار کیا تو ساورکر نے کہا، ’’ہم کون ہوتے ہیں جرمنی، جاپان یا روس یا اٹلی کے ساتھ کسی خاص طریقے سے سلوک کرنے والے؟ ایک پالیسی؟ کیا یہ صرف اس لیے ہے کہ ہم ان علمی کششوں کی طرف متوجہ ہیں؟ یقیناً ہٹلر پنڈت نہرو سے بہتر جانتے ہیں کہ جرمنی کے لیے کیا بہتر تھا۔ پنڈت نہرو جب تمام ہندوستانیوں کے نام پر جرمنی یا اٹلی کے خلاف ہو گئے تو وہ اپنے راستے سے ہٹ گئے۔ زیادہ سے زیادہ، پنڈت نہرو ہندوستان میں کانگریس کی موجودہ صورتحال کو ظاہر کرنے کا دعویٰ کر سکتے ہیں لیکن جرمن، اطالوی یا جاپانی عوام پر یہ واضح ہونا چاہیے کہ ہندوستان کے ہندو تنظیمی لیڈروں کی جرمنی یا اٹلی یا جاپان یا دنیا کے کسی بھی ملک کے تئیں صرف اس لئے کوئی بری خواہش نہیں ہے کہ انہوں نے حکومت یا آئینی پالیسی کا کوئی خاص طریقہ انتخاب کیا گیا ہے۔‘‘


جب جرمنی میں یہودی مخالف قتل عام کا آغاز ہوا، جسے ’نائٹ آف دی بروکن گلاس‘ کے نام سے جانا جاتا ہے، تو ہندو نواز مہاسبھا میگزینوں نے جرمنی کے حق میں مضامین شائع کیے۔ انڈین نیشنل کانگریس ہندوستان میں جرمن یہودیوں کے لیے محفوظ پناہ گاہوں کا وعدہ کرنے کی حد تک گئی۔ جبکہ ساورکر نے نازیوں کا جواز پیش کیا، جب انہوں نے کہا، ’’قوم پرستی کا انحصار ایک مشترکہ جغرافیائی علاقے پر اتنا نہیں ہے جتنا کہ سوچ، مذہب، زبان اور ثقافت کے اتحاد پر۔ اس وجہ سے، جرمنوں اور یہودیوں کو ایک قوم نہیں سمجھا جا سکتا۔ مجموعی طور پر ہندوستانی مسلمان جرمنی کے یہودیوں کی طرح، پڑوس میں رہنے والے ہندوؤں کے مقابلے ہندوستان سے باہر کے مسلمانوں کے ساتھ اپنے اور اپنے مفادات کی شناخت کرنے میں زیادہ دلچسپی رکھتے ہیں۔‘‘

ہندوتوا کے زبردست فسطائی اور نازی حامی ہونے کے تمام دستاویزی ثبوتوں کے باوجود، سوال یہ ہے کہ اسرائیل اور صیہونیت ہندوتوا کے لیے ترجیحی سانچہ کیوں اور کیسے بن گئے؟ اس کا جواب اس حقیقت میں مضمر ہے کہ صیہونیت اور اسرائیل کی تخلیق میں ہندوتوا نے سیاست کا ایک نیا خاکہ تلاش کیا جس میں مذہب کی کامیاب سیاست، سامراج نوازی کا عالمی نظریہ، قوم پرستی کا نظریہ مکمل طور پر خون اور نسل پر مبنی اور ایک 'دشمن مسلمان' سے نمٹنے کا ایک فارمولہ پر مشتمل تھا۔

ہندوتوا اور صیہونیت کے درمیان حقیقی امتزاج امریکہ میں ہوا۔ طویل کوششوں کے بعد، یونائیٹڈ اسٹیٹس انڈیا پولیٹیکل ایکشن کمیٹی 2002 میں ہندوستانی امریکن ریپبلکنز نے امریکن اسرائیل پبلک افیئر کمیٹی اور امریکن جیوش کمیٹی کی مدد سے قائم کی تھی۔ ستمبر 2002 میں، وزیر اعظم اور ہندو دائیں بازو کے دیرینہ رہنما اٹل بہاری واجپائی نے برتھ انٹرنیشنل اور جیوش انسٹی ٹیوٹ برائے قومی سلامتی امور کے لوگوں سے ملاقات کی، جہاں انہوں نے 'بھارت اور اسرائیل کے درمیان تعلقات کو بہتر بنانے' پر تبادلہ خیال کیا۔ 2014 کے بعد سے، یعنی نریندر مودی کی قیادت والی بی جے پی کے اقتدار میں آنے کے بعد، صیہونیت اور ہندوتوا کے درمیان گہرے تعلقات نے کئی بدصورت واقعات کو جنم دیا۔ ہندوستان اسرائیل کا ہتھیاروں کی تجارت کا نمبر 1 خریدار بن گیا ہے۔ یہ اسرائیل کے ہتھیاروں کی برآمدات کا 42 فیصد ہے۔ ہندوستان، جسے فلسطین لبریشن آرگنائزیشن (پی ایل او) کو تسلیم کرنے والا پہلا غیر عرب ملک ہونے کا اعزاز حاصل ہے اور نوآبادیاتی اور نسل پرستی کی مخالفت کرنے والی ناوابستہ تحریک کے رہنماؤں میں سے ایک نے اقوام متحدہ کی طرف سے منظور کردہ اس قرارداد سے خود کو الگ کر لیا ہے، جس میں جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا۔ اسی طرح اکتوبر میں بھی ہندوستان ایک اہم قرارداد سے دور رہا جو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے لیے اسرائیلی کارروائیوں کی تحقیقات سے متعلق تھی۔ عوامی سطح پر ہندوتوا طاقتیں فلسطینیوں پر اسرائیلی حملے کو ’مسلمانوں کو سکھائے گئے سبق‘ سے تعبیر کر رہی ہیں۔

یہ تاریک وقت ہے۔ صہیونی یہودیوں کو ان لوگوں کی دوستی ملی ہے۔ جنہوں نے ہٹلر کے حراستی کیمپوں میں اس کے غیر انسانی قتل عام کے دوران اس کی تعریف کی تھی۔

(مضمون نگار شُبھم شرما کنیکٹیکٹ یونیورسٹی، امریکہ میں پی ایچ ڈی سکالر ہیں)

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;