وستارا ایئر لائنز کو امید ہے کہ اس ہفتے کے آخر تک بحران ختم ہو جائے گا، پائلٹوں کی ناراضگی برقرار

ٹاٹا گروپ نے گزشتہ سال ایئر انڈیا کو خرید لیا تھا۔ اب وستارا اور اس کے انضمام پر ہنگامہ شروع ہو گیا ہے۔ ایئر انڈیا اور وستارا کے تنخواہ کے ڈھانچے میں بہت فرق ہے، جس کے خلاف پائلٹ احتجاج کر رہے ہیں

<div class="paragraphs"><p>وستارا ائیرلائن، تصویر آئی اے این ایس</p></div>

وستارا ائیرلائن، تصویر آئی اے این ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: ٹاٹا گروپ کی وستارا ایئر لائن ان دنوں اندرونی بحران کا سامنا کر رہی ہے۔ زیادہ تر پائلٹ کام پر نہیں آ رہے جس کی وجہ سے روزانہ بڑی تعداد میں پروازیں منسوخ ہو رہی ہیں۔ تاہم وستارا نے امید ظاہر کی ہے کہ بحران اس ہفتے کے آخر تک ختم ہو جائے گا اور پروازوں کی نقل و حرکت معمول پر آ جائے گی۔

رپورٹ کے مطابق، وستارا کے پائلٹ صحت سے متعلق مسائل کی وجہ سے پروازیں نہیں چلا رہے ہیں۔ اس کے براہ راست حفاظتی مضمرات ہو سکتے ہیں۔ ذرائع کے مطابق، ’’پائلٹ طویل عرصے تک پروازوں میں کام کر رہے ہیں جس کی وجہ سے صحت کے بڑے مسائل پیدا ہو رہے ہیں اور ہر کوئی بار بار بیمار ہو رہا ہے۔‘‘


مسافروں کی کمی کا سامنا کرنے والی وستارا ایئر لائنز مسلسل اپنی پروازیں منسوخ کر رہی ہے۔ وستارا ایئر لائنز بھی ایئر انڈیا کے ساتھ انضمام کے عمل میں ہے اور اس کے پائلٹ تنخواہ کے ڈھانچے میں ترمیم کی مخالفت کر رہے ہیں اور تمام پائلٹوں کے لیے برابر تنخواہ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ وستارا کے پائلٹ بیماری کا حوالہ دے کر کام پر نہیں آ رہے ہیں۔ تاہم، ذرائع نے ’’اجتماعی طور پر بیماری کا حوالہ دیتے ہوئے چھٹی لینے سے انکار کر دیا ہے۔‘‘

وستارا کے ذرائع کا کہنا ہے کہ ’’تمام پائلٹس مسلسل فلائٹ ڈیوٹی کی وجہ سے تھک رہے ہیں۔ ایف ڈی ٹی ایل (فلائٹ ڈیوٹی ٹائم لمیٹیشن) کے نئے قوانین سے ہمیں کچھ راحت کی امید تھی لیکن ایسا نہیں ہو رہا ہے۔‘‘

خیال رہے کہ ٹاٹا گروپ نے گزشتہ سال ایئر انڈیا کو خریدا تھا۔ اب توسیع اور اس کے انضمام پر ہنگامہ شروع ہو گیا ہے۔ ایئر انڈیا اور وستارا کی تنخواہ کے ڈھانچے میں بہت فرق ہے۔ ایئر انڈیا کی تنخواہ کا ڈھانچہ 40 گھنٹے کی پرواز کے لیے کم از کم یقین دہانی شدہ تنخواہ پر مبنی ہے، جب کہ وستارا میں 70 گھنٹے کے لیے کم از کم یقین دہانی شدہ تنخواہ ہے۔


ٹاٹا گروپ نے گزشتہ ہفتے وسارا کے لیے ایئر انڈیا کے تنخواہ کے ڈھانچے کو اپنایا ہے۔ اس وجہ سے وستارا ایئر لائنز کے پائلٹس کی تنخواہ میں کٹوتی کی گئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق پائلٹ اسی وجہ سے احتجاج کر رہے ہیں۔ پائلٹ بیماری اور تھکاوٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کام پر نہیں آ رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ وستارا ایئر لائنز کی اب تک 100 سے زیادہ پروازیں منسوخ ہو چکی ہیں۔

گزشتہ ہفتے ڈائریکٹوریٹ جنرل آف سول ایوی ایشن یا ڈی جی سی اے نے پائلٹوں کے لیے نظرثانی شدہ فلائنگ ڈیوٹی اصولوں کے نفاذ کو ملتوی کر دیا تھا جو یکم جون سے لاگو ہونے والے تھے۔ نظر ثانی شدہ اصولوں کو مبینہ طور پر بڑی مشاورت کے لیے کچھ وقت کے لیے ملتوی کر دیا گیا ہے۔ نیا معیار پائلٹوں کو آرام کرنے کے لیے مزید وقت فراہم کرے گا، جو پائلٹ کی تھکاوٹ کو کم کرنے کی کوشش کی نشاندہی کرتا ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


/* */