پٹرول-ڈیزل کی قیمتوں میں آگ لگنے کا سلسلہ جاری، لگاتار تیسرے روز اضافہ

پانچ ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقہ میں انتخابات ختم ہوتے ہی تیل کمپنیوں نے پٹرول اور ڈیزل کے داموں میں اضافہ کرنا شروع کر دیا، دہلی میں پٹرول تقریباً 91 روپے فی لیٹر ہو گیا ہے

پٹرول ڈیزل / یو این آئی
پٹرول ڈیزل / یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: آئل کمپنیوں نے جمعرات کے روز پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں پھر اضافہ کر دیا، جس کے بعد دہلی میں پٹرول 25 پیسے فی لیٹر مہنگا ہو گیا، جبکہ ڈیزل کے داموں میں 30 پیسے فی لیٹر کا اضافہ کیا گیا ہے۔ دہلی میں پٹرول تقریباً 91 روپے فی لیٹر تک پہنچ گیا ہے۔

خیال رہے کہ پانچ ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقہ میں اسمبلی انتخابات ختم ہونے کے ساتھ ہی تیل کمپنیوں نے پٹرول اور ڈیزل کے داموں میں اضافہ کرنا شروع کر دیا۔ اس سے قبل پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں تقریباً دو ماہ تک اضافہ نہیں کیا گیا تھا۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ تیل کمپنیاں صرف اور صرف انتخابات خاتم ہونے کی منتظر تھیں۔

داموں میں تازہ اضافہ کے بعد دہلی میں پٹرول 90.99 روپے اور ڈیزل 81.42 روپے فی لیٹر پر دستیاب ہے۔ اسی طرح ممبئی میں پٹرول 97.34 روپے اور ڈیزل 88.49 فی لیٹر، چنئی میں پٹرول 92.90 روپے اور ڈیزل 86.35 روپے فی لیٹر اور کولکاتا میں پٹرول 91.14 روپے اور ڈیزل 84.26 روپے فی لیٹر ہو گیا ہے۔

بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کے داموں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے اور منگل کے روز اس کے دام 7ہفتوں کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئے۔ تاہم، ہندوستان میں جو خام تیل درآمد ہوتا ہے اس کی قیمت تقریباً 25 دن پہلے کی ہوتی ہے۔

غور طلب ہے کہ انتخابات کے دوران فروری کے آخر سے پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں کوئی اضافہ نہیں ہوا تھا لیکن 2 مئی کو نتائج آنے کے بعد 4 مئی سے پٹرول اور ڈیزل کے داموں میں اضافہ کا سلسلہ ہو گیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔