آئی ڈی بی آئی بینک کے مکمل پرائیویٹائزیشن کی تاریخ فائنل!

ابھی آر بی آئی نے آئی ڈی بی آئی بینک میں حکومت کی 45.5 فیصد اور ایل آئی سی کی 49.24 فیصد حصہ داری ہے، بقیہ 5.29 فیصد حصہ داری نان-پروموٹرس کے پاس ہے۔

آئی ڈی بی آئی بینک / سوشل میڈیا
آئی ڈی بی آئی بینک / سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

مرکزی حکومت کمپنیوں کے پرائیویٹائزیشن یعنی نجکاری کا عمل تیزی کے ساتھ آگے بڑھا رہی ہے۔ اسی ضمن میں آئی ڈی بی آئی بینک کے مکمل پرائیویٹائزیشن کا عمل بھی اب تیز ہو گیا ہے۔ اس بینک کی نجکاری کا فیصلہ تو بہت پہلے ہی ہو چکا تھا، اب حکومت نے اس سلسلے میں تاریخ بھی فائنل کر دی ہے۔ مرکزی حکومت نے طے کیا ہے کہ رواں مالی سال کے اختتام سے پہلے یعنی 31 مارچ 2023 سے پہلے حکومت آئی ڈی بی آئی بینک کے پرائیویٹائزیشن کا عمل مکمل کر دے گی۔ یہ جانکاری ’بزنس ٹوڈے ٹی وی‘ کے ساتھ خصوصی بات چیت کے دوران وزارت مالیات کے ایک افسر نے دی۔

اس سلسلے میں ’آج تک‘ پر ایک رپورٹ شائع ہوئی ہے جس میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ آئی ڈی بی آئی کے پرائیویٹائزیشن کے ساتھ ساتھ مزید دو کمپنیوں کا پرائیویٹائزیشن بھی ہوگا۔ ان دو کمپنیوں کے نام ہیں شپنگ کارپوریشن آف انڈیا اور بی ای ایم ایل لمیٹڈ۔ ان دونوں کمپنیوں کو بھی فروخت کرنے کے لیے حکومت ہند منصوبہ بندی کر رہی ہے۔


غور کرنے والی بات یہ بھی ہے کہ افسران کے مطابق مارچ 2023 سے پہلے کنٹینر کارپوریشن آف انڈیا اور ہندوستان زِنک کے ڈِس انوسٹمنٹ کا عمل شروع ہو جائے گا۔ ہندوستان زِنک میں مرکزی حکومت کی 29.58 فیصد حصہ داری ہے۔ مرکزی کابینہ کی معاشی امور کی کمیٹی سے اس شیئر کو فروخت کرنے سے متعلق منظوری مل چکی ہے۔

بہرحال، ابھی آر بی آئی نے آئی ڈی بی آئی بینک کو پرائیویٹ سیکٹر کے بینک کی کیٹگری میں رکھا ہوا ہے۔ اس میں حکومت کی 45.5 فیصد اور ایل آئی سی کی 49.24 فیصد حصہ داری ہے۔ بقیہ 5.29 فیصد حصہ داری نان-پروموٹرس کے پاس ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔