سمندر کے راستے آنے والے عازمین حج کے لیے سعودی عرب کا جامع آپریشنل پلان!

آپریشنل پروگرام کا مقصد اللہ کے مہمانوں کو ہر ممکن سہولت مہیا کرنا اور ان کی تمام ضروریات پوری کرنا ہے تاکہ وہ فریضہ حج کی ادائی کی عظیم عبادت کے دوران یکسوئی کے ساتھ مناسک حج ادا کر سکیں۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا

قومی آوازبیورو

سعودی عرب کی حکومت نے فریضہ حج کی ادائیگی کے لیے آنے والے فرزندان توحید کی ہر ممکن معاونت کی خاطر بری، بحری اور فضائی تمام راستے کھول دیئے ہیں۔ سنہ 1440ھ کے حج کے لیے بحری راستوں سے آنے والے عازمین حج کے لیے مکمل اور جامع آپریشنل پروگرام وضع کیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ‌ کے مطابق اس آپریشنل پروگرام کا مقصد اللہ کے مہمانوں کو ہر ممکن سہولت مہیا کرنا اور ان کی تمام ضروریات پوری کرنے میں ان کی مدد کو یقینی بنانا ہے تاکہ وہ فریضہ حج کی ادائیگی کی عظیم عبادت کے دوران یکسوئی کے ساتھ مناسک حج ادا کر سکیں۔ بحری راستوں سے آنے والےعازمین حج کے لیے آپریشنل پروگرام کی نگرانی سعودی بندرگاہ اتھارٹی کو سونپی گئی ہے جب کہ کئی دیگر سرکاری اور نجی ادارے بھی اس میں تعاون کر رہے ہیں۔

سعودی عرب کی مختلف بندرگاہوں پر عازمین حج کے لیے استقبالیہ کیمپ لگائے گئے ہیں۔ جدہ بندرگاہ میں 14 ذی القعدہ کو سمندر کے راستے عازمین حج کا پہلا قافلہ سعودی عرب میں داخل ہوگا۔ اس کے بعد روزانہ کی بنیاد پر عازمین حج کی آمد 4 ذی الحجۃ تک جاری رہے گی۔

رواں سال جدہ بندرگاہ سے 22 ہزار عازمین حج کی سعودیہ میں داخلے کی امید ہے جب کہ گذشتہ برس 22 قافلوں کی شکل میں 16 ہزار عازمین حج سعودی عرب میں داخل ہوئے تھے۔

جدہ اسلامی بندرگاہ میں مسافر ٹرمینل میں فی گھنٹہ 800 عازمین حج کی آمدو رفت کی گنجائش ہے۔ ٹرمینل پر 5 پلیٹ فارم بنائے گئے ہیں۔ تین پلیٹ فارم آنے والے عازمین اور 2 جانے والے حجاج کرام کے لیے ہیں۔ ان تمام پلیٹ فارمز پرعازمین حج کی آمد ورفت کے لیے تمام سہولیات فراہم کی گئی ہیں۔

آپریشنل پروگرام کے تحت عازمین حج کے سامان کی چھان بین کے لیے 14 جدید مشیںیں لگائی گئی ہیں۔ عازمین حج کے سامان کی متنقلی کے لیے 700 ٹرالیوں، مریضوں اور خصوصی عازمین حج کے لیے 28 بسوں کا بھی اہتمام کیا گیا ہے۔

بندرگاہ پر حجاج کرام کے لیے بنائے گئے ٹرمینل پر ہنگامی حالات سے نمٹنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کیے گئے ہیں۔ فائر بریگیڈ کا عملہ اور آگ بجھانے والے آلات اور دیگر ضروری سہولیات مہیا کی گئی ہیں۔ جدہ بندرگاہ پر عازمین حج کی رہنمائی کے لیے 266 گائیڈ مقرر کیے گئے ہیں جو عازمین کو مختلف امور میں ان کی رہنمائی فراہم کر رہے ہیں۔

جدہ بندرگاہ پر عازمین حج کو حرم شریف تک لانے یا ان کی قیام گاہوں تک پہنچانے کے لیے بسوں کا انتظام ہے اور ان بسوں کے لیے 23600 مربع میٹر کی جگہ کو وسیع کرکے 27000 مربع میٹر اسٹینڈ بنایا گیا ہے جس کے بعد ان اڈوں سے مسافروں کی گنجائش 1000 سے بڑھا کر 2800 کردی گئی ہے۔ مسافروں کے سامان کی چیکنگ کے لیے ’ایکسرے‘ سسٹم نصب ہے۔

بیرون ملک سے سمندر کے راستے سعودی عرب پہنچنے والے عازمین حج جدہ کے علاوہ الضبا بندرگاہ پر بھی اتریں گے۔ رواں سال اس بندرگاہ سے 40 ہزار عازمین حج کی آمد متوقع ہے۔