سعودی عرب میں شکار کے ضوابط کی خلاف ورزی پر بھاری جرمانوں کا اعلان

وزارت ماحولیات کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ جنگلی حیات بالخصوص معدومیت کے خطرے سے دوچار جانداروں کا تحفظ ہماری پہلی ترجیح ہے۔

تصویر العربیہ ڈاٹ نیٹ
تصویر العربیہ ڈاٹ نیٹ
user

قومی آوازبیورو

ریاض: سعودی عرب کی وزارت ماحولیات نے مملکت میں تحفظ ماحولیات سے متعلق شاہی فرمان اور کابینہ کے فیصلہ کے مطابق جانوروں کے شکار کے وضع کردہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر جرمانوں کا اعلان کیا ہے۔

وزارت ماحولیات کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ جنگلی حیات بالخصوص معدومیت کے خطرے سے دوچار جانداروں کا تحفظ ہماری پہلی ترجیح ہے۔ یہی وجہ ہے کہ حکومت نے اندھا دھند اور ظالمانہ شکار کی روک تھام، جانداروں کے شکار کی حد مقرر کرنے، شکاریوں کو شکار کا شوق پورا کرنے میں انہیں محفوظ ماحول فراہم کرنے اور شکار کے میدان میں سرکایہ ماری کے مواقع پیدا کرنے کے لیے اقدامات کیے ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ حکومت نے شکار کے ضوابط کی خلاف ورزی، ممنوعہ جانوروں کو شکار کرنے، ممنوعہ وقت میں شکار کرنے، بغیر لائسنس کے شکار کرنے، شکار کے لیے غیر مجاز طریقوں کے استعمال اور دیگر ضوابط کی خلاف ورزی پر بھاری جرمانے مقرر کیے گئے ہیں۔

وزارت ماحولیات کی طرف سے جرمانوں کی جاری کردہ فہرست میں کہا گیا ہے کہ بغیر لائسنس کے شکار کرنے پر 10 ہزار ریال جرمانہ کیا جائے گا۔ ممنوعہ علاقے میں شکار پر 5 ہزار، ممنوعہ موسم میں شکار پر 5 ہزار، شکار کے دوران لائسنس کا استعمال نہ کرنے پر 10 ہزار ریال اور پرندوں کے گھونسلوں اور انڈوں کو بتاہ کرنے اور ان کی نسلی کشی جیسے اقدامات پر 10 لاکھ ریال جرمانہ ادا کرنا ہوگا۔

اسی طرح عربی ہرن کے شکار پر 90 ہزار ریال جرمانہ ہوگا۔ سیہ پر 70 ہزار ریال، افریقی بجو کے شکار پر80 ہزار ریال،عرب بھیڑیا اور گیدڑ کے شکار پر 80 ہزار ریال، عربی چیتے پر 4 لاکھ ریال، عسیری فاختہ کے شکار پر ایک لاکھ ریال، ابو منچل کے شکار پر 2 لاکھ ریال، بڑی جسامت اور لمبی دم والی چھپکلی کے شکار پر تین ہزار ریال اور جنگی خرفوش کے شکار پر 18 ہزار ریال جرمانہ ہوگا۔

بشکریہ العربیہ ڈاٹ نیٹ

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next