فلسطین کی نئی حکومت کی حلف برداری

فلسطینی صدر نے کہا کہ حکومت کا مقصد اسرائیلی قبضے سے آزادی حاصل کرنا ہے، اور اقوام متحدہ کی مکمل رکنیت حاصل کرنے کے لیے مل کر کام کرنا  ہے۔

<div class="paragraphs"><p>فائل تصویر آئی اے این ایس</p></div>

فائل تصویر آئی اے این ایس

user

یو این آئی

وزیر اعظم محمد مصطفیٰ کی قیادت میں فلسطین کی نئی حکومت نے اتوار کے روز مغربی کنارے میں حلف لیا۔نئی حکومت 23 وزارتی قلمدانوں پر مشتمل ہے، جن میں غزہ کی پٹی کے کم از کم چھ وزراء شامل ہیں۔ محمد مصطفیٰ وزیر خارجہ کا عہدہ بھی سنبھالیں گے، جو پہلے تجربہ کار سفارت کار ریاض المالکی کے پاس تھی۔

حلف برداری کی تقریب کے دوران فلسطینی صدر محمود عباس سے وزیر اعظم محمد مصطفیٰ نے عہد کیا کہ ان کی نئی حکومت تمام فلسطینیوں کی خدمت کرے گی، حکومت کی سیاسی ترجیحات پر زور جائے گا جن میں فلسطین لبریشن آرگنائزیشن اور اس کا سیاسی پروگرام اور بین الاقوامی عہد بندیاں شامل ہیں، جیسا کہ صدر محمود عباس نے تفویض نامہ کے ذریعے لازمی قرار دیا ہے۔


تقریب کے بعد نئی حکومت کے ساتھ ملاقات میں محمود عباس نے اس بات کی تصدیق کی کہ غزہ میں جاری تنازع کو روکنے کے لیے عرب اور بین الاقوامی فریقوں کے ساتھ مل کر کام جاری ہے۔

سرکاری خبر رساں ایجنسی WAFA کے مطابق فلسطینی صدر نے کہا، "ہمارا سیاسی مقصد اسرائیلی قبضے سے آزادی حاصل کرنا ہے، اور ہم اقوام متحدہ کی مکمل رکنیت حاصل کرنے کے لیے متعلقہ عرب اور بین الاقوامی فریقوں کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں۔"WAFA کے مطابق، 14 مارچ کو، محمود عباس نے فلسطین انوسٹمنٹ فنڈ کے سربراہ اور اپنے دیرینہ اقتصادی مشیر محمد مصطفیٰ کو 19ویں حکومت بنانے کا کام سونپا۔


غزہ، مغربی کنارے اور یروشلم میں ہونے والی پیش رفت کے درمیان مشکل حالات کے درمیان سابقہ حکومت کے مستعفی ہونے اور محمود عباس پر فلسطینی اتھارٹی میں اصلاحات اور غزہ کے تنازعے کے نتیجے میں فلسطینی ریاست پر حکومت چلانے کے قابل سیاسی ڈھانچہ قائم کرنے کے لیے دباؤ بڑھنے کے بعد ان کی تقرری عمل میں آئی۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


/* */